$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

۵۵)

        کہ رسول اللہ صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم  کی بارگاہ اقدس  میں اسکے بعد ایک  ایسا ہی شخص لایا  گیا  جس نے چوتھی مرتبہ شراب پی تھی، تو آپ  نے اس پر  صرف حد جاری  فرمائی  اور قتل  کا  حکم نہیں  فرمایا۔

       امام ترمذی فرماتے ہیں :۔

        انما کان ہذا فی اول  الامر ثم نسخ بعد،  والعمل علی ہذا عند  عامۃ اہل  العلم، لا نعلم  بینہم اختلافا فی ذلک فی القدیم والحدیث،و مما یقوی ہذا ماروی عن النبی صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم من اوجہ کثیرۃ انہ قال :

       لا یحل دم  امرء مسلم یشہد ان لا الہ اللہ وانی رسول اللہ  الا باحدی ثلث، النفس بالننفس، والثیب الزانی، و التارک لدینہ ۔(۵۶)

        یہ حکم قتل  اول امر میںتھا پھر منسوخ ہوا۔ تمام علماء فقہاء اس پر متفق ہیں ، متقدمین  و متاخرین  میں کسی کا اختلاف اس سلسلہ میں  ہمیں  معلوم نہیں ۔ اس موقف کی تائید اس روایت سے ہوتی ہے جو متعدد طرق سے  مروی ہے، حضور نبی کریم صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔

       کسی مسلمان کا خون بہانا صرف  تین  چیزوں میں سے کسی ایک چیز کے ذریعہ ہی جائز ہے،  قتل  عمد کے قصاص میں ،  شادی  شدہ  زانی ،  اور مرتد۔

       واضح  رہے کہ اجماع خود مستقل ناسخ نہیں ہوتا بلکہ نسخ   پر دال ہو تا ہے۔(۵۷)

  تصانیف فن

 ٭     الاعتبار فی الناسخ و المنسوخ من الآثار للحازمی        م ۵۸۴

 ٭     الناسخ والمنسوخ للا مام احمد،                    م  ۲۴۱

 ٭     تجرید الاحادیث المنسوخۃ لا بن  الجوزی،            م  ۵۹۷

 خبر مردود

 تعریف:۔ جس  حدیث کا ثبوت بعض  یا کل شرائط قبولیت  کے معدوم ہونے کی وجہ سے  راجح

نہ ہو، اسکا  دوسرا معروف عنوان’ ضعیف ‘ہے ۔

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html