$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       جیسے راوی  سے قولاً یا فعلاً اسی حدیث کی مخالفت ثابت ہو ۔  یا فقہاء صحابہ اور ائمہ فقہ  و حدیث سے مخالفت ثابت ہو  جبکہ قرائن حدیث کا  تقاضہ  ہو کہ وہ اس حدیث سے ناواقف نہ ہوں گے تو اس  پر عمل جائز نہیں ۔

        اول صورت میں اسکو نسخ پر اوردوسری صورت میں عدم ثبوت اور عدم صحت پر محمول کریں گے۔ جیسے کسی راوی نے اپنی روایت کا اظہار کر دیا تو  روایت مقبول نہیں اور انکار  رجوع پر محمول ہوگا۔

       یہاں ایک بات اور اہم ہے کہ  سننے  کے بعد سے روایت  برابر راوی کے ذہن میں محفوظ ہو۔  ذہول نہ ہو جائے۔  ہاں تحریر میں  محفوظ ہے اور رتحریر دیکھ کر   یاد آگئی  تو اعتبار ہو گا ورنہ  نہیں ۔ یہ امام اعظم کے  نزدیک ہے ، امام ابو یوسف فرماتے ہیں ، تحریر اپنے پاس ہو یا دوسرے کے پاس لیکن اطمینان ہو تو کافی ہے۔ (۳۳)

        اسی انداز کی شرطوں کی وجہ سے   اہل تحقیق بیان کر تے ہیں کہ  امام اعظم  نے احادیث کے  ردو قبول  کا جو معیار  اپنایا  تھا وہ عام محدثین  سے سخت  تر تھا۔(۳۴)

 احاد کی  باعتبار قوت و ضعف تقسیمات

                     دو قسمیں ہیں:۔

              Xمقبول              X     مردود

 خبر مقبول

 تعریف :۔ جس حدیث کا  ثبوت راجح ہو۔

       اس  حدیث کو  جید، قوی،  صالح، مجود،  ثابت، محفوظ اور معروف بھی کہا  جاتا ہے۔

 حکم :۔ شرعی  احکام میں  قابل احتجاج اور لائق عمل ہے۔  مقبول  میں  دو تقسیمات ہیں :۔

              باعتبار فرق مراتب               باعتبار عمل

 تقسیم  اول باعتبار فرق  مراتب

                            چار  قسمیں ہیں :۔

       Xصحیح لذاتہ   Xصحیح لغیرہ   X حسن  لذاتہ  Xحسن  لغیرہ

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html