Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

ہے۔  اس  حدیث کی سند متصل  اور حدیث موقوف۔

 منقطع:۔ وہ حدیث مرفوع یا موقوف جسکے بعض رواۃ سند سے ساقط ہوں، واضح رہے کہ منقطع 

تین معنی پر  بولا جا تا ہے۔

۱۔      حدیث مقطوع جو کسی تابعی  کا قول و فعل ہو۔  کما مر

۲۔    متصل  مقطوع کا مقابل کہ سند سے کوئی  راوی ساقط ہو ایک  خواہ زیادہ، مسلسل              یا  متفرق۔

۳۔    دوسرے معنی پر بولا جانے والا منقطع مقسم ہے اور یہ اسکی ایک قسم ۔

 اقسا م خبر با عتبار نقل

         سلسلۂ سند کے اعتبار سے ہم تک  پہونچنے والی احادیث کی دو قسمیں ہیں۔

                     Xمتواتر                    X    غیر متواتر

 تعریف:۔ جس حدیث کے راوی ہر طبقہ میں  اتنے ہوں کہ ان کا جھوٹ پر اتفاق کر لینا محال

عقلی بھی ہو اور  عادی بھی ،  نیز مضمون حدیث حسیات سے متعلق ہو عقلی قیاسی نہ ہو۔ اسکو متواتراسنادی بھی  کہتے  ہیں۔( ۱۴)

٭    الفاظ  متحد ہوں تو متواتر لفظی بھی کہا جاتا ہے۔

٭    معنی  متواتر ہوں الفاط نہیں  تو  متواتر معنوی اور متواتر قدر مشترک کہتے ہیں ۔

٭    کبھی ایک بڑی جماعت کے ہر قرن میں عمل کی بنیاد پر بھی  تواتر کا حکم  لگتا ہے، اسکو              متواتر عملی کہا جاتاہے۔

٭    کبھی  دلائل  متواتر ہوتے ہیں تو اسکو متواتر استدلالی کہتے ہیں۔

 مثال  متواتر اسنادی:۔ من کذب علی  متعمدا فلیتبوٗا مقعدہ من النار۔( ۱۵)

        جو شخص قصداً  میری طرف جھوٹ منسوب کرے  اپنا  ٹھکانہ  جہنم میں بنا لے۔

 ٭     امام  ابن صلاح نے کہا: اس حدیث کو ۶۲ صحابہ کرام نے  روایت کیا ۔ نیز  فرمایا ؒ اسکی سند میں  تمام عشرۃ



Total Pages: 604

Go To