Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

کی طرف مشیر  ہوں۔

       جیسے:۔ توضأ ، صلی، صام، حج،  اعتکف،  وغیرہا۔

 تقریری:۔ حضور کی مجلس میں کوئی کام کسی مسلمان  سے صادر ہوا اور آپ نے انکار نہ  فرمایا۔

 وصفیـ:۔ حضور کے اوصاف و حالات کا ذکر جن احادیث سے ثابت ہو۔

 مرفوع حکمی:۔ جو حدیث بظاہر حضور کی طرف منسوب نہ ہو لیکن کسی خاص وجہ  کے سبب اس پر

حکم رفع   لگایا جا ئے۔  وجوہ رفع میں بعض یہ  ہیں:۔

۱۔     کوئی صحابی جو صاحب اسرائیلیات نہ ہوں ان   کا ایسا قول  جس   میں اجتہاد وقیاس کو            دخل  نہ ہو،  نہ لغت کابیان مقصود ہو اورنہ کسی لفظ کی شرح ہو ، بلکہ  جیسے گزشتہ( ابتدائے            آفرینش)   اور آئندہ ( احوال قیامت) کی خبر یاکسی مخصوص جزا ء و سزا کا  بیان ہو۔

۲۔    کسی صحابی کا  ایسا فعل  جس  میں  اجتہاد کی  گنجائش نہ ہو۔

        جیسے حضرت علی کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم کا نماز کسوف میں دو سے زائد رکوع کرنا۔

۳۔    حضور نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ  علیہ وسلم کے زمانہ اقدس کی طرف کسی کام کی نسبت کرنا،            جیسے حضرت  جابر بن عبد اللہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہما کا فرمان:۔

       کنا نعزل علی عہد رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم۔  ان دونوں            صورتوں میں ظاہر یہ ہی ہے کہ   سید عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم اس فعل  پر مطلع تھے  اور             اس فعل  کے جواز پر وحی  آ چکی  تھی۔

 ۴۔     فعل مجہول کے   ذریعہ کسی  چیز کو بیان  کرنا۔

        جیسے:۔ امرنا بکذا۔       و نہنینا بکذا۔

 ۵۔     یا راوی یوں  کہے،’’ من السنۃ کذا‘‘ کہ  اس سے بھی  بظاہر  سنت نبوی  مفہوم ہوتی          ہے ، اگر چہ  احتمال یہ بھی ہے کہ خلفائے راشدین کی سنت یا دیگر  صحابہ کا طریقہ مراد      ہو۔

 ۶۔   کوئی صحابی کسی آیت کاشان نزول بیان کرے۔(۷)

 



Total Pages: 604

Go To