Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

تلامذہ :۔ آپ کے تلامذہ کی فہرست نہایت طویل ہے ،چند یہ ہیں ۔

       ھیثم بن کلیب شاشی ، دائود بن نصر بن سہل بزدوی ، عبد بن محمد بن محمود نسفی ، محمد بن نمیر ، وغیرہم ۔نیز آپ کے جلیل القدر اساتذہ امام بخاری اور امام مسلم نے بھی آپ سے حدیث کا سماع  کیا ہے ۔ آپ نے ایسی دو احادیث کی طرف اپنی جامع میں اشارہ فرمایا ۔ ایک ابواب التفسیر سورۃ الحشر میں اور دوسری ابواب المناقب فضیلت علی میں ۔ یہ دونوں احادیث امام

بخاری نے آپ سے سنی ہیں ۔

       نیز امام مسلم  نے ،رویت ھلال ،کے باب میں آپکی روایت سے بیان کی ہے ۔

 علم وفضل ۔اللہ رب العزت نے آپ کو نادر المثال قوت حافظہ سے نوازا تھا ، آپ نے ایک

واقعہ یوں بیان فرمایا :۔

       میں نے ایک استاذ سے انکی مرویات کے دو جز نقل کئے تھے ،ایک مرتبہ مکہ کے سفر میں وہ میرے ہمراہ تھے ۔ مجھے اب تک دوبارہ ان اجزاء کی جانچ پڑتال کا موقع نہیں ملا تھا میں نے شیخ سے درخواست کی کہ آپ ان کاحادیث کی قرأت کریں میں سنکر مقابلہ کرتاجائوں ،شیخ نے منظو کرلیا اور فرمایا : اجزاء نکال لو ، میں پڑھتا ہوں اور تم مقابلہ کرتے جانا ۔آ پ نے وہ اجزاء تلاش کئے مگر ساتھ نہ تھے ،بہت فکر مند ہوئے لیکن میں نے سماعت کی غرض سے سادہ کاغذ ہاتھ میں لے لئے اور فرضی طور پر سننے میں مشغو ل ہوگیا ۔اتفاق سے ان اوراق پر شیخ کی نظر پڑ گئی توناراض ہوکر بولے ۔تم کو شرم نہیں آتی مجھ سے مذاق کرتے ہو ،پھر  میں نے ساراماجرا سناکر

عذر پیش کیا ،اور عرض کیا آپ کی سنائی ہوئی تمام احادیث مجھے محفوظ ہیں ۔

       شیخ نے کہا: سنائو ،میں نے وہ تمام احادیث من وعن سنادیں ،شیخ نے دوبارہ امتحان لینے کی غرض سے چالیس احادیث اور پڑھیں میں نے ان سب کو بھی اسی ترتیب سے سنادیا ،

اس پر شیخ نے نہایت تحسین وآفریں فرمائی اور فرمایا ۔

        مارأیت مثلک ۔

       میں نے تمہاری مثل آج تک کسی کو نہیں دیکھا ۔

 



Total Pages: 604

Go To