$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

نہایت پاکیزہ اصول پر استوار کیا تھا اور دنیا کے غلط رسم ورواج سے بہت دور رہکر اپنی نیک نیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۰۷۔  جامع بیان العلم لا بن عبد البر،           ۱ /۹۷   ٭          تدوین حدیث،      ۱۵۵

کے آثار آنے والوں کی رہنمائی کیلئے چھوڑگئے ۔یہ حضرات مذہب وملت کے عظیم ستون اورمنارئہ نور تھے جواپنے علم وفضل ،زہدوتقوی ،صبروتوکل اور قناعت وسیرچشمی سے امت مسلمہ کی رہنمائی کے خواہاں رہتے ،حکام وقت کی ہرزہ سرائیاں بھی انکے عزم وحوصلہ اور حق گوئی وبے

باکی کی راہ میں رکاوٹ نہ بن سکیں ۔

فقیہ یزید بن ابی حبیب     

       مصر کے فقیہ یزید بن ابی حبیب علم وفضل اوردیا     نت و    تقوی میں مشہور تھے ،پورے مصر میں انکے حزم واتقاء کے ڈنکے بجتے تھے ،حکومت وقت انکے تابع فرمان رہتی ۔حکومت کی گدی پرجب کوئی نیا حکمراں بیٹھتا اور بیعت لینا چاہتا تولوگ بیک زبان کہتے کہ یزید بن ابی حبیب

اورعبداللہ بن ابی جعفر جو کہیں گے ہم وہ کرینگے ۔

       لیث بن سعد جنکا ذکر گذرا فرماتے تھے ۔

        ھما جوہر تاالبلاء کانت البیعۃ اذاجاء ت للخلیفۃ ھما اول من یبایع ۔(۱۰۸)

       یہ دونوں حضرات ملک مصر کے تابناک جوہر تھے ،خلیفہ کیلئے بیعت لی جاتی تویہ ہی

دونوں پہلے بیعت کرتے تھے ۔

       یہ ہی لیث کہتے ہیں۔

        یزید عالمناویزید سیدنا ۔(۱۰۹)

       یزید ہمارے ملک کے عالم ہیں اوریزید ہمارے پیشواہیں ۔

        ایک دفعہ آپ بیمار ہوئے اس زمانہ میں بنی امیہ کی حکومت کی طرف سے مصر کا جوعرب   گورنرتھا اسکا نام حوثرہ بن سہل تھا ، عوام کے قلوب میں جوان کا مقام تھا اسکو دیکھتے ہوئے اس نے ضروری خیال کیا کہ عیادت کیلئے خودجائے ،آیا ،اس وقت یزید بیٹھے ہوئے تھے ،مزاج پرسی کے بعد اس نے ایک مسئلہ پوچھا ،کیا کھٹمل کا خون کپڑے میں لگاہو تونماز ہوجائیگی ؟ یزید نے

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html