$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

پانچ ہزار اشرفیاں تک قرض کی ادائیگی کیلئے بھیجی ہیں ۔

       آپکے دسترخوان پر کھانے والے اہل علم اور طلبہ کا تذکرہ کرتے ہوئے خطیب بغدادی

لکھتے  ہیں:۔

       کان یطعم الناس فی الشتاء الہرائس بعسل النحل وسمن البقر ،وفی

الصیف  سویق اللوزبالسکر۔(۹۷)

        سردیوں میں لوگوں کو ہریس کھلاتے جوشہد اور گائے کے گھی میں تیار کیاجاتاتھا ،

اورگرمیوں میں بادام کا ستو شکر کے ساتھ کھلاتے تھے ۔

 امام  معانی  بن  عمر 

       موصل کے امام حافظ الحدیث معافی بن عمران جلیل القدر فقیہ ہیں ، امام ثوری کے ارشد تلامذہ میں شمار ہوتے ہیں ،طلب علم میں ایک مدت تک سفر  میں  رہے  ،امام ابن مبارک اورامام

وکیع کے شیوخ  سے ہیں ۔

        امام ذہبی نے لکھاہے کہ:۔

        انکی ایک بڑی جاگیر تھی ، اسکی آمدنی سے اپنے خرچ کی رقم نکال کر اپنے اصحاب

اورتلامذہ کو باقی سب بھیج دیا کرتے تھے ۔اور روز مرہ کا معمول تھا ۔

       کان المعافی لایأکل وحدہ ۔(۹۸)

        کبھی تنہاکھانا نہیں کھاتے تھے ۔

       یہ طریقہ ان حضرات کا تھا جو خود بھی شب وروز اشاعت علم حدیث میں لگے رہتے اور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۹۷۔     تاریخ بغداد للخطیب،                  ۳/۹

 ۹۸۔     تہذیب التہذیب لا بن حجر،            ۵/۴۷۴

ان لوگوں کی کفالت کرتے جنکی راہ میں مالی مشکلات اس علم کو حاصل کرنے سے مانع ہوسکتی

تھیں ۔  یاوہ لوگ جو علمی مشاغل کی بناپر کاروبار میں حصہ نہیں لے سکتے تھے ۔ رب کریم نے ان کیلئے غیب سے ایسے انتظام فرمادیئے تھے کہ وہ پورے طور پر علم دین کی حفاظت کیلئے کمر بستہ

رہتے ۔

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html