$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

فصاحت وبلاغت کے دریا بہاتے اور بغداد کی مجالس حدیث میں ایک ایک لاکھ

لوگوں کا مجمع آپ سے سماعت کرتا ۔علامہ ابن حجر لکھتے ہیں ۔

       لقد حدث بغداد فاجتمع عندہ مائۃ الف یتعجبون من فصاحتہ۔ (۹۴)

       بغداد میں حدیث بیان کرتے تو ایک لاکھ تک کا مجمع ہوتا اور آپ کی فصاحت پر لوگوں کو

تعجب ہوتا۔

       خطیب بغدادی نے آپ کے تذکرہ میں لکھاہے ۔

       کان الہیاج بن بسطام لایمکن لاحدان یسمع من حدیثہ حتی یطعم من طعامہ ،کان لہ مائدۃ مبسوطۃ لاصحاب الحدیث ،کل من یأتیہ لایحدثہ الا من یأکل من طعامہ۔ (۹۵)

        ہیاج بن بسطام سے لوگ اس وقت تک حدیث نہیں سن پاتے تھے جب تک انکے یہاں کھانا نہیں کھالیتے ۔طالبان علم حدیث کیلئے انکا دسترخوان نہایت وسیع تھا ،جوشخص حدیث

کی سماعت کیلئے آتا پہلے کھانا کھاتا پھر حدیث سنتاتھا ۔

 امام لیث بن  سعد

       مصر کے مشہور امام جلیل لیث بن سعد جو علم میں امام مالک کے ہم پلہ سمجھے جاتے تھے ۔

بلکہ امام شافعی  توفرماتے :۔

        اللیث افقہ من مالک الاان اصحابہ لم یقوموا بہ۔( ۹۶)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۹۴۔    تہذیب التہذیب لا بن حجر،            ۶/۵۸

۹۵۔     تاریخ بغداد للخطیب،                  ۱۴/۸۳

۹۶۔     تہذیب التہذیب لا بن حجر،            ۴/۶۱۰

       لیث بن سعد امام مالک سے زیادہ فقیہ ہیں مگر انکے تلامذہ نے انکے مسلک کی اشاعت

نہیں کی ۔

        انکے حسن سلوک کا اعتراف انکے ہمعصروں نے کیا ہے ،کہتے ہیں : انکی جاگیر کی سالانہ آمدنی پچیس تیس ہزار اشرفی تھی ،اسکا بڑا حصہ محدثین اور طالبان علم حدیث وفقہ پر خرچ فرماتے ،امام مالک کو سالانہ ایک ہزار اشرفیاں التزامابھیجاکرتے تھے ،بعض اوقات توآپ نے

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html