$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       حضرت فضیل بن عیاض رضی اللہ تعالیٰ عنہ آپکے ساتھی اوردوست ہیں ،امام اعظم قدس سرہ سے فقہ وحدیث کی تعلیم پائی ،ایک دن آپکے تجارتی مشاغل دیکھ کر کچھ  کہا توآپ نے

فرمایا : ۔

       لولاک واصحابک مااتجرت ۔(۹۰)

        اگر آپ اورآپکے ساتھی محدثین وصوفیہ نہ ہوتے تو میں ہرگز تجارت نہ کرتا۔

        غرضکہ علم حدیث کے طلبہ پر آپکی نوازشات عام تھیں ۔

  امام یحیی بن معین

       فن رجال کے امام الائمہ یحی  بن معین کے والد معین عظیم سرمایہ کے مالک تھے ۔انتقال کے وقت انہوں نے دس لاکھ پچاس ہزار درہم صاحبزادے کیلئے چھوڑے ۔اس زمانے کے لحاظ سے اتنی کثیر رقم کا اندازہ آپ خود کیجئے ،لیکن آپ نے اس سرمایہ کو اپنے عیش وآرام میں خرچ نہ کیا ،کسی شہر کا رئیس بنکر مرجانا انکو پسند نہیں تھا بلکہ یہ ساری دولت اللہ کے رسول  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی احادیث کے حصول اور موضوع روایات کوچھانٹ چھانٹ کرعلیحدہ کرنے میں خرچ کرڈالی ۔   نوبت  بایں جارسید کہ

       خطیب بغدادی لکھتے ہیں :۔

        فانفقہ کلہ علی الحدیث حتی لم یبق لہ نعل یلبسہ۔ (۹۱)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۹۰۔     تاریخ  بغداد للخطیب،                  ۱/۱۶۰

۹۱۔     تاریخ  بغداد للخطیب،                  ۱۴/۱۷۸

        ساڑھے دس لاکھ درہم آپ نے علم حدیث کے حصول میں خرچ کردئیے ،آخر میں چپل تک باقی نہ رہی ۔

        امام حاکم نے آپ کے علم حدیث کونکھار نے کے تعلق سے ایک واقعہ لکھا ہے کہ

       امام احمد بن حنبل نے بیان فرمایا: ہم جس زمانہ میں صنعاء یمن میں حدیث پڑھنے کیلئے مشغول تھے اورمیرے ساتھیوں میں یحی بن معین بھی تھے ۔ایک دن میں نے دیکھا کہ آپ ایک گوشہ میں بیٹھے ہوئے کچھ لکھ رہے ہیں ۔کوئی شخص اگر سامنے آتا ہے تو اسکو چھپا لیتے ہیں ، دریافت کرنے پر معلوم ہوا کہ حضرت انس بن مالک کی طرف منسوب ’ابان ‘ کی روایت سے جو جعلی مجموعہ پایا جاتاہے اسکو نقل کررہے ہیں ۔ میں نے کہا: تم ان غلط



Total Pages: 604

Go To
$footer_html