$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       اب حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے الفاظ ،تقریباً نوے سال بعد کے ان الفاظ کے پہلو بہ پہلو رکھئے توآپ کو ان دونوں میں یکتانیت نظر آئے گی جوایک ہی شخص اورایک ہی دماغ کے خیالات میں نظر آتی ہے ۔ وہاں بھی خدائی حفاظت کے وعدے نے حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ کے ارادہ میں جنبش پیداکی تھی اوریہاں بھی وہی وعدہ حضرت عمربن عبدالعزیز کے اس اقدام کے لئے محرک بنا ۔                                            

       ماوشمار بہانہ ساختہ اند۔( ۸۷)

       تدوین حدیث کے لئے اہل ثروت محدثین نے دریا د لی کا ثبوت  دیا

        آج کی طرح  مندرجہ  بالا تمام ترتحقیقات انکو گھر بیٹھے ہی حاصل نہیں ہوگئی تھیں ۔بلکہ ان حضرات نے کتنی جانفشانیاں کیں اورکن حوادث سے دوچار ہوئے انکی داستان نہایت طویل

ہے ۔

       مشتے نمونہ ازخروارے ،کے طورپر چند ملاحظہ فرمائیں ۔

 امام عبد اللہ بن مبارک 

       آپ نہایت عظیم تاجر تھے اور حدیث وفقہ کے امام بھی ،چار مہینے طلب حدیث میں

گذارتے ،چارماہ میدان جہاد میں ، اور چار ماہ تجارت کرتے تھے ۔فقہ میں امام اعظم رضی اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۷۔     ضیاء النبی                  ۷/۱۲۲            تا        ۱۲۴

تعالیٰ عنہ کے ارشد تلامذہ میں شمار ہوتے ہیں ۔

        طلب علم حدیث وفقہ میں ذوق علمی کا یہ واقعہ بڑامشہور ہے کہ ایک مرتبہ والد ماجد نے آپ کو پچاس ہزار درہم تجارت کیلئے دیئے توتمام رقم طلب حدیث میں خرچ کرکے واپس آئے والدماجد نے دراہم کی بابت دریافت کیا تو آپ نے جس قدر حدیث کے دفتر لکھے تھے والد کے حضور پیش کردیئے اور عرض کیا : میں نے ایسی تجارت کی ہے جس سے ہم دونوں کو جہان میں نفع حاصل ہوگا ۔والد ماجد بہت خوش ہوئے اور مزید تیس ہزار درہم عنایت کرکے فرمایا : جایئے

علم حدیث وفقہ کی طلب میں  خرچ کرکے اپنی تجارت کامل کرلیجئے ۔(۸۸)

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html