Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

میں کسی ضرورت سے آئے ہوئے تھے ،اس نے خواہش ظاہر کی کہ شہزادے کوکچھ حدیثیں لکھوادیجئے ،آپ راضی ہوگئے اورآپ نے چار سواحادیث املاکرادیں ۔ایک ماہ بعد جب

زہری دوبارہ پہونچے  توبڑے افسوس سے ہشام نے کہا :۔

        ان ذلک الکتاب ضاع۔( ۸۲)

        وہ کتاب ضائع ہوگئی ۔

       آپ نے فرمایا: توپریشانی  کی کیابات ہے ؟لائو پھرلکھوائے دیتے ہیں ، غرضکہ آپ

نے برجستہ پھرچار سواحادیث کا املا کرادیا ۔

       اب سنئے ،درحقیقت پہلا نسخہ ضائع نہیں ہواتھا بلکہ ہشام کی یہ ایک ترکیب تھی ،جب

امام زہری دربار سے چلے گئے تویوں ہوا ۔

        قابل بالکتاب الاول فماغادرحرفا۔

        جب پہلی کتاب سے مقابلہ کیاگیا توایک حرف بھی نہیں چھوٹاتھا ۔

       امام ابوزرعہ رازی کے حالات میں لکھاہے کہ ایک مرتبہ محمدبن مسلم اورفضل بن عباس کے درمیان آپکی مجلس میں ایک حدیث کے الفاظ پر بحث شروع ہوگئی ،جب کوئی فیصلہ نہ ہوا توآپکی طرف رجوع کیاگیا ،آپ نے اپنے بھتیجے ابوالقاسم کوبلوایا ،جب وہ آئے تو آپ نے

فرمایا:۔

        ادخل بیت الکتب فدع القمطرالاول والثانی والثالث ،وعد ستۃ عشر جزئً وأتنی بالجزء السابع عشر۔( ۸۳)

        کتب خانہ میں جاؤ اور پہلے دوسرے تیسرے بستہ کو چھوڑ کر چوتھے بستہ سے سولہ حصوں کے بعد سترہواں حصہ میرے پاس لائو ۔

        ابوالقاسم کا بیان ہے کہ حافظہ ابوزرعہ نے اس حصہ کے اوراق الٹ کرحدیث جس صفحہ پرتھی اسکو نکال کرپیش کردیا ۔ محمد بن مسلم نے جب وہ حدیث ملاحظہ کی تو صاف اقرار کرنا پڑا کہ ہاں ہم نے غلطی کی ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۲۔     تذکرۃ الحفاظ للذہبی،                 ۱/۲۰۱

۸۳۔    تہذیب التہذیب                       ۷/۳۳

 



Total Pages: 604

Go To