$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

        صحابہ و تابعین کے حفظ و ضبط کی نادر مثالیں  

       حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی بابت آپ پڑھ چکے کہ آپ سے ۵۳۷۲ احادیث مروی ہیں ،حضور اقدس  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے انکی یادداشت کیلئے دعا کی تھی جسکے نتیجہ میں آپ فرماتے تھے کہ پھر میں کبھی کوئی حدیث نہیں بھولا،آپکے اس دعوی پرہوسکتا ہے کچھ شک گذراہوکہ ایک دن مروان بن الحکم نے آپ کو بلایا ،مروان کے سکریٹری ابوالزعزہ کابیان ہے کہ مجھے پہلے ہی حکم مل چکا تھا کہ میں پردہ کے پیچھے بیٹھ کرجو کچھ وہ بیان کریں لکھتا جائوں ، بہرحال یہ ہی ہوا ،مروان مختلف انداز سے سوالات کرتا اورحضرت ابوہریرہ احادیث کریمہ بیان کرتے جاتے اور میں پس پردہ لکھتا جاتاتھا ۔یہاں تک کہ ایک اچھاخاصا مجموعہ تیار ہوگیا ۔

لیکن ابوہریرہ کوکچھ خبر نہ تھی ۔

        اسکے بعد حضرت ابوہریرہ چلے گئے اوروہ مجموعہ بحفاظت رکھ دیاگیا ۔ابوالزعزہ کہتے

ہیں ۔

       فترکہ سنۃ ثم ارسلہ الیہ واجلسنی وراء الستر فجعل یسألہ واناانظر فی

الکتاب فمازادولانقص ۔(۸۱)

        مروان نے اس مجموعہ کوایک سال تک رکھ چھوڑا ،اسکے بعد حضرت ابوہریرہ کو پھر بلایا اور مجھے بٹھاکر آپ سے وہی احادیث پھر پوچھیں ،میں کتاب دیکھتاجاتا تھا ،پوری کتاب سنادی

لیکن نہ کسی لفظ کااضافہ تھا اورنہ کمی ۔

        گویا یہ آپ کا متحان تھا جس میں آپ دعائے رسول کی بدولت فائز  المرام رہے اوراہل

دربار نے آ پ کے حافظہ کی قوت کی توثیق کی ۔

        حضرت امام ابن شہاب زہری جنکو حدیث رسول کی تدوین کیلئے باقاعدہ دربارخلافت سے حکم نامہ جاری ہواتھا اورانہوں نے نہایت محنت شاقہ سے باحسن وجوہ یہ کارنامہ انجام دیا

جسکی تفصیل آئندہ صفحات میں ملاحظہ کریں ،کہاجاتا ہے کہ

       ہشام بن عبدالملک نے آپکے حافظہ کاامتحان لینا چاہا تویوں کیاکہ ایک دن آپ دربار

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۱۔    کتاب الکتی للبخاری،                  ۳۳

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html