$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

آٹھ لاکھ احادیث بھی یاد تھیں لیکن اصل صحیح احادیث کی تعدادکتنی ہے ۔امام حاکم کی تصریح یوں ہے ۔

        الحدیث التی فی الدرجۃ الاولی لاتبلغ عشرۃ آلاف۔( ۷۷)

       اعلی درجہ کی احادیث کی کل تعداد دس ہزار تک نہیں پہونچ پاتی ۔

       بلکہ بعض کے نزدیک تواصل تعدادچارہزار سے کچھ متجاوز ہے جیسا کہ علامہ امیریمانی لکھتے ہیں :۔

        من جملۃ لاحادیث المسندۃ عن النبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم یعنی الصحیحۃ بلاتکرار اربعۃ آلاف واربع مأۃ۔( ۷۸)

        جملہ احادیث مسندہ صحیحہ غیر مکررہ کی تعداد چار ہزار چارسوہے ۔

  پہلی صدی  کے آخر تک  بعض صحابہ موجود  تھے

       صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین کی ان مساعی جلیلہ کے بعد احادیث کی روایت کتابت اورانکی حفاظت کا سلسلہ یہاں آکر ختم نہیں ہوگیا تھا بلکہ جس طرح صحابہ کرام نے اس سرمایۂ دین ومذہب کوجان سے زیادہ عزیز رکھا اسی طرح بعد کے لوگوں نے بھی اسکو سینہ سے لگائے رکھا ۔

       صحابہ کرام کا دور پوری صدی کو محیط ہے ،گویا سوسال تک حضور سیدعالم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی حیات طیبہ کے قولی اورعملی نمونے اس دنیا میں نوروعرفان کی بارش فرماتے رہے ،ستر اسی سال تک رہنے والے اصحاب رسول توکثیر تعداد میں تھے لیکن مندرجہ ذیل چار حضرات کا وصال تو صدی کے آخر اوربعض کا دوسری صدی میں ہوا ۔

۱۔    حضرت انس بن مالک             ۲۔   حضرت محمود بن ربیع

۳۔    حضرت ہرماس بن زیاد باہلی        ۴۔    حضرت ابوالطفیل عامر بن وائلہ

 رضی اللہ تعالیٰ عنہم

        آخری صحابی حضرت ابوالطفیل کا  ۱۱۰ھ میں بمقام مکہ مکرمہ وصال ہوا ۔لہذایہ بات اپنے مقام پر بالکل متحقق اور طے شدہ ہے کہ پوری ایک صدی تک دنیا صحابہ کرام کے فیض سے مستفیض رہی ۔ انکے تلامذہ میں جلیل القدر تابعین ،ائمۂ مجتہدین اور فقہاء و محدثین شمار کئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۷۷۔    توجیہ  النظر،                                                                  ۹۳

 ۷۸۔     تذکرۃ المحدثین مصنفہ  علامہ غلام رسول  سعیدی،  بحوالہ توضیح  الافکار،   ۶۳

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html