$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       میں نے  حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے سامنے ایک حدیث پڑھی ،آپ نے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۹۔     السنن للدارمی،                        ۶۸      ٭        السنۃ قبل التدوین،           ۳۴۸

۵۰۔     جامع بیان العلم لا بن  عبد البر،           ۸۴

۵۱۔     فیوض الباری،                          ۱/۲۳

 

اس کو تسلیم نہ کیا ،میں نے عرض کیا : یہ حدیث میں نے آپ ہی سے سنی ہے ،فرمایا : اگر واقعی تم نے یہ حدیث مجھ سے سنی ہے تو پھر یہ میرے پاس لکھی ہوئی موجود ہوگی ۔پھر آپ میرا ہاتھ پکڑ کر مجھے اپنے گھر لے گئے ،آپ نے ہمیں حضور   صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی احادیث کی کئی کتابیں دکھائیں وہاں وہ متعلقہ حدیث بھی موجود تھی ،آپ نے فرمایا: میں نے تم سے کہا تھا نا کہ اگر یہ

حدیث میں  نے تمہیں سنائی  ہے تو ضرور میرے پاس لکھی ہوگی۔( ۵۲)

        اس روایت سے ظاہر کہ آپ کے پاس تحریر شدہ احادیث دس پانچ نہیں تھیں بلکہ جو کچھ  وہ بیان کرتے تھے ان سب کو قید کتابت میں لے آئے تھے ۔قارئین اس بات سے بخوبی انداز

لگاسکتے ہیں کہ صحابہ کے دور میں کتنا عظیم ذخیرئہ حدیث بشکل کتابت ظہور پذیر ہوچکا تھا ۔

 حضرت عبداللہ بن عمر کی مرویات

       یہ بھی ان صحابہ کرام میں ہیں جو ابتدائً کتابت حدیث کے حق میں نہ تھے ، لیکن زمانے کے بدلتے حالات نے انکو بھی کتابت حدیث کے موقف پر لا کھڑا کیا تھا ،لہذا آپ نے بھی  کتابت  حدیث  کا سلسلہ شروع کیا ، آپکے ارشد تلامذہ میں حضرت نافع آپکے آزاد کردہ غلام ہیں ،تیس سال آپکی خدمت میں رہے ،امام مالک ان سے روایت کرتے ہیں ،انکے بارے

میں حضرت سلیما ن بن موسی کا بیان ہے ۔

        انہ رأی نافعا مولی ابن عمر علی علمہ ویکتب بین یدیہ (۵۳)

       انہوں نے دیکھا کہ حضرت نافع حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہم کے علم کے حافظ تھے

اورانکے سامنے بیٹھ کر لکھا کرتے تھے ۔

       حضرت مجاہد ،حضرت سعید بن جبیر اور آپکے بیٹے حضرت سالم کا بھی یہ ہی طریقہ تھا ،

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html