Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

عن ابی قبیل رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : سمعت عبداللہ قال: بینما نحن حول رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نکتب اذ سئل رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم ای المدینتین تفتح اولا قسطنطنیۃ اورومیۃ ؟ فقال النبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم : لابل مدینۃ ہرقل ۔(۴۰)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳۸۔     المعجم الکبیر للطبرانی،               ۴/۳۲۹

۳۹۔      المستدرک للحاکم،                           ۱/۱۰۶

۴۰۔     السنن للدارمی،                        ۱/۱۶۲

        حضرت ابو قبیل کا بیان ہے کہ میں نے حضرت عبداللہ بن مسعود  رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو فرماتے سنا ، کہ ہم رسول اللہ   صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی خدمت میں بیٹھے لکھ رہے تھے کہ اتنے میں حضور سے پوچھا گیا : یارسول اللہ !دونوں شہروں میں سے پہلے کون فتح ہوگا ،قسطنطنیہ یا

رومیہ ؟ اس کے جواب میں حضور نے فرمایا : نہیں بلکہ ہرقل کا شہر یعنی قسطنطنیہ ۔

       حضور نبی کریم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے فتح مکہ کے سال ایک خطبہ دیا جس کا پس منظر یوں ہے :۔     بنوخزاعہ کے کچھ لوگوں نے بنو لیث کے کسی ایک شخص کو قتل کردیا ،حضور کو اس چیز کی اطلاع دی گئی ،آپ نے ایک سواری پر تشریف فرماہوکر خطبہ شروع فرمایا ،اس مبارک بیان میں مکہ معظمہ کی حرمت اور لوگوں کو قتل وغارت گری سے بچانے کیلئے سخت ہدایات تھیں ،اس خطبہ کی عظمت کے پیش نظر یمنی صحابی حضرت ابوشاہ نے لکھنے کی خواہش ظاہر کی تو حضور نے

یہ پورا خطبہ لکھوایاتھا ۔(۴۱)

        حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ تعالیٰ عنہ جب یمن کے گورنر مقرر کئے گئے اور آپ یمن جانے لگے تو حضور نے ان کو ضروری چیزیں لکھواکر مرحمت فرمائیں ،ساتھ ہی اشباہ ونظائر پر قیاس اور استنباط مسائل کی تعلیم سے بھی نوازا۔آپ نے وہاں جاکر جب ماحول کا  جائزہ لیا تو بہت سی باتیں الجھن کا باعث تھیں ، لہذا آپ نے ان تمام چیزوں کے متعلق بارگاہ رسالت سے

ہدایات طلب کیں جس کے جواب میں حضور نے ان کو ایک تحریر روانہ فرمائی۔( ۴۲)

        اسی طرح  وائل بن حجر مشہور صحابی جو حضر موت کے شہزادے تھے جب مشرف باسلام ہوئے اور اپنے وطن واپس جانے لگے توحضور سے نماز ،روزہ ،سود اور شراب وغیرہ کے اسلامی

 



Total Pages: 604

Go To