Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

شیأ غیرالقرآن ،ومن کتب عنی شیأ غیرالقرآن فلیمحہ (۲۹)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۷۔ ۲۹۔     المسند لا حمد بن  حنبل،  ۳/۲۱ ٭   المستدرک للحاکم،  ۱/۱۲۷

          المنہل  اللطیف فی اصول  الحدیث الشریف،  ۱۷

       حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ حضوراقدس سے روایت کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا : میری طرف سے سوائے قرآن  حکیم کے کوئی چیز نہ لکھو ،اور جس نے قرآن حکیم کے علاوہ کچھ لکھا ہو وہ اسے مٹادے ۔

        علامہ محمدبن علوی المالکی الحسنی فرماتے ہیں :۔

        وہذاھو الحدیث الصحیح الوحید فی الباب۔ (۳۰)

        اس موضوع پر یہی واحد صحیح حدیث ہے :۔

        اس حدیث کے علاوہ بعض کتابوں میں اس مفہوم کی کچھ اور احادیث بھی مل جاتی ہیں ، اس قسم کی احادیث صراحۃً کتابت حدیث سے منع کررہی ہیں ، جولوگ یہ ثابت کرنا چاہتے ہیں کہ احادیث طیبہ کی کتابت وتدوین دوسری یاتیسری صدی ہجری سے پہلے نہیں ہوئی وہ صرف اسی مفہوم کی احادیث کو پیش کرتے ہیں ،لیکن حقیقت یہ ہے کہ احادیث کی کتابت سے منع کرنے والی ان احادیث کے ساتھ ساتھ ایسی احادیث بھی کثرت سے موجود ہیں جو احادیث طیبہ کو لکھنے کی ترغیب دیتی ہیں ،اور بعض احادیث سے تو یہ بھی پتہ چلتاہے کہ حضور اقدس صلی اللہ  تعالیٰ

علیہ وسلم نے خود احادیث لکھنے کا حکم دیا۔(۳۱)

        یہاں ایک حدیث ملاحظہ ہوباقی تفصیل آئندہ صفحات میں پیش کی جائیگی ۔

        حضرت عبداللہ بن عمروبن عاص رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ

       کنت اکتب کل شیٔ اسمعہ من رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم ارید حفظہ فنھتنی قریش وقالوا : تکتب کل شیٔ سمعتہ من رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم ورسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم بشر یتکلم فی الغضب والرضا فامسکت عن الکتاب ،فذکرت ذلک لرسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ

وسلم فأومأباصبعہ الی فمہ وقال : اکتب فوالذی نفسی بیدہ ماخرج منہ الاحقِ     ( ۳۲)

       میں حضور نبی کریم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم سے جوکچھ سنتا اسے لکھ لیتا تھا ،میرامقصد یہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳۰۔    المنہل اللطیف فی اصول الحدیث الشریف،     ۱۷

 



Total Pages: 604

Go To