$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۷۔ ۲۷۔    السنۃ قبل التدوین،  ۲۹۹

۲۸۔     ضیاء النبی،  ۱۱۲

 عہد صحابہ اور  تدوین حدیث

       مستشرقین اور منکرین حدیث اس بات پر مصر ہیں کہ حدیث لکھنے کی ممانعت  خود حضور سے مروی ہے پھراحادیث لکھنے کا سوال ہی پید انہیں ہوتا ۔

       اس کے جواب کی طرف ہم ابتدائے مضمون میں اشارہ کرچکے ہیں ،یہاں قدر ے تفصیل سے ملاحظہ فرمائیں ۔

       سب سے پہلی بات تو یہ کہ ممانعت پر زور دینے والے اپنا یہ اصول بھول جاتے ہیں کہ ممانعت ثابت کرنے کیلئے بھی وہ احادیث ہی کا سہارالے رہے ہیں۔

       منکرین کا نہایت نامعقول طریقہ یہ بھی ہے کہ پہلے ایک اصول اور نصب العین متعین کرتے ہیں اور پھر اسکے بعد روایتوں کا جائزہ لیتے ہیں ،ا س نصب العین کی حمایت میں جو روایتیں ملتی ہیں انکو حرزجاں بناکر زوردار انداز میں بیان کرتے ہیں خواہ وہ روایات جس نہج کی ہوں یاکتنی ہی قلیل کیوں نہ ہوں ۔لیکن جن سے احادیث لکھنے کی اجازت ثابت ہو انکو ذکر کرتے ہوئے شرم محسوس ہوتی ہے جب کہ ایسی روایتیں ہی کثیر ہیں اور جواز کتابت میں نص  صریح بھی ۔ دونوں طرح کی روایتیں ملاحظہ کریں تاکہ فیصلہ آسان ہو ۔

 کتابت و ممانعت والی  روایتوں میں تطبیق

        علامہ پیرکرم شاہ ازہری لکھتے ہیں :۔

        اس بات میں کوئی شک نہیں کہ حضور اقدس  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی بعض ایسی احادیث موجود ہیں جن میں احادیث لکھنے کی ممانعت کی گئی ہے ۔بعض صحابہ کرام سے بھی ایسے آثار مروی ہیں کہ انہوں نے احادیث لکھنے کو ناپسند فرمایا ۔اور تابعین میں بھی ایسے لوگ نظر آتے ہیں جن  کے بیانات سے اندازہ  ہوتاہے کہ وہ احادیث لکھنے کے  خلاف تھے ۔

       روی ابوسعید الخدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ عن النبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم انہ قال : لاتکتبوا عنی



Total Pages: 604

Go To
$footer_html