$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

۲۰۔     مقدمہ  تاریخ تدوین حدیث،             ۳۱

 ۲۱۔     السنۃ قبل  التدوین،                               ۱۹۵

       امثال ابی سفیان بن امیۃ بن عبد شمس۔ (۲۲)

       اس سے پتہ چلتاہے کہ زمانۂ جاہلیت میں کچھ مدارس موجود تھے جن میں بچے کتابت ، شاعری اورعربی تاریخ سیکھتے تھے ،اور ان مدارس کے سربراہ بڑے بااثر معلم ہوتے تھے ،جیسے ابوسفیان بن امیہ بن عبد شمس وغیرہ ۔

       وکان العرب یطلقون اسم الکامل علی کل رجل یکتب ویحسن الرمی ویجید السباحۃ۔( ۲۳)

       جو شخص کتابت ،تیراندازی اور تیراکی کاماہر ہوتا عرب اسے کامل ،کا لقب عطاکرتے تھے۔

  قرآن کریم نے قلم و کتابت کی اہمیت  سے ا ٓگاہ کیا

       مندرجہ بالااقتباسات تواسلام سے پہلے عرب میں کتابت کے رواج کا پتہ دیتے ہیں ، لیکن اسلام نے جہاں زندگی کے دیگر تمام شعبوں میں دوررس تبدیلیاں کیں وہاں اس نے عربوں کی علمی حالت میں بھی ایک انقلاب برپا کیا ۔ قرآن کریم کی بے شمار آیات قلم اور کتابت کی اہمیت پرروشنی ڈالتی ہیں ۔اللہ تعالیٰ نے قلم کو علم سکھا نے کا ذریعہ قرار دیا ہے۔

       سورۃ العلق میں ارشادخداوندی ہے ۔

       اقرأ وربک الاکرم الذی علم بالقلم ،(۲۴)

       پڑھئے ! آپ کا رب بڑاکریم ہے ،جس نے علم سکھا یا قلم کے واسطہ سے ۔

       قرآن حکیم کے نزدیک قلم وکتابت کی اہمیت کا ثبوت اس سے زیادہ اورکیا ہوسکتا ہے کہ قرآن حکیم کی ایک سورۃ کو ’القلم ،کا نام دیاگیا ہے ،اور اس سورۃ میں اللہ تعالیٰ نے قلم کی قسم بھی یاد فرمائی ہے اور ان چیزوں کی بھی قسم ذکر فرمائی جنہیں قلم لکھتا ہے ۔

       نٓ والقلم وما یسطرون ،(۲۵)

       قسم ہے قلم کی اور جو کچھ وہ لکھتے ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۲۔     السنۃ قبل التدوین،                               ۲۹۵

 ۲۳۔     السنۃ قبل  التدوین،                               ۲۹۵

۲۴۔     القرآن الحکیم،  سورۃ العلق،                     ۳۴

۲۵۔     القرآن الحکیم،   سورہ   القلم،           ۱

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html