Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

حدیث سے تہی دامن تھے اورنغیر کالفظ بھی کچھ غیر مشہورساہے لہذا فرمادیا یہ لفظ بعیرہے اور تلامذہ کوبے دھڑک بتادیا کہ حضور ابوعمیر سے پوچھ رہے ہیں ۔

       اے ابوعمیر اونٹ کیاہوا ۔

       صحیح بخاری کی روایت میں صراحت ہے کہ یہ ایسے بچے تھے کہ ابھی دودھ چھوٹا تھا ،پھر قارئین اس بات کااندازہ خود لگاسکتے ہیں کہ ابوعمیر کاواسطہ کس سے رہاہوگا اونٹ سے یاچڑیاسے ،نیز حضور کا مزاح یہاں کلام مسجع کی شکل میں ہے تو پھر مقصد ہی فوت ہوگیا ۔

       امام حاکم نے ایک اور واقعہ انہیں سے متعلق لکھا ہے ۔کہ اہل عرب عموماً قافلوں میں نکلتے تھے لہذا اونٹوں کے گلے میں گھنٹیاں باندھتے ، انکی غرض جوبھی رہی ہو لیکن اس سے منع کیاگیا ،غالبا سازومزامیرکی شکل سے مشابہت کی وجہ سے ،الفاظ حدیث یوں منقول ہیں ۔

       لاتعجب الملائکۃ رفقۃ فیھا جرس ۔

       فرشتے اس قافلہ کو دوست نہیں رکھتے جس کے جانوروں کے گلے میں گھنٹیاں ہوں ، ان صاحب نے ’جرس ‘ کو’ خرس‘  پڑھ دیا اور مطلب بیان فرمایا کہ جولوگ ریچھ کوقافلہ میں رکھتے ہیں وہ ملائکہ کے نزدیک ناپسند یدہ ہیں ۔

       اسی طرح مشہور حدیث ہے :۔

       البزاق فی المسجد خطیئۃ وکفارتہا دفنہا ۔(۲)

       مسجد میں تھوک گناہ اور اسکا کفارہ دفن کردینا ہے۔

       اسکے متعلق ایک محدث صاحب کاواقعہ منقول ہے کہ انہوں نے اسکو ’البراق ‘ پڑھا اور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۔        الجامع الصحیح للبخاری،  باب الکنیۃ للصبی،

          السنن لا بی داؤد،   کتاب الادب باب فی الرجل  یکنی،

۲۔        الجامع الصحیح  للبخاری،   باب کفارۃ البزاق فی المسجد،                     ۱/۵۹

          الصحیح  لمسلم،  باب  النھی  عن البصاق فی المسجد،               ۱/۲۰۷

معنی بتائے کہ براق مسجد میں دیکھے تودفن کرڈالے ۔

       امام حاکم اس سے بھی عجیب تربیان کرتے ہیں ،کہ مشہور محدث حضرت ابن خزیمہ نے فرمایا : مشہور



Total Pages: 604

Go To