Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

المقدس کی تعمیر کا حکم ملنے کاذکر ہے وہ اسے بیان کرے ۔ حضرت ابوذرغفاری نے فرمایا : میں نے یہ حدیث حضور سے سنی ہے ،دوسرے اور پھر تیسرے صاحب نے بھی کھڑے ہوکر تصدیق کی ۔یہ سن  کر حضرت عمر نے ان کو چھوڑ دیا ۔اس پر حضرت ابی بن کعب نے کہا : اے عمر ! کیا تم مجھ پر حضور صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی حدیث کے سلسلہ میں تہمت لگاتے ہو ؟ حضرت عمر نے فرمایا : میں تمہیں متہم نہیں کرتا ،میں نے تو حدیث کے سلسلہ میں

ا حتیاط کیلئے یہ طریقہ اختیار کیا ہے۔ (۶۰)

       حضرت مالک بن اوس رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں :۔

       سمعت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ یقول لعبد الرحمن بن عوف وطلحۃ والزبیر وسعد رضی اللہ تعالیٰ عنہم : نشدتکم باللہ الذی تقوم السماء والارض بہ ،اعلمتم ان رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم قال: انالانورث ماترکناہ صدقۃ قالوا : اللہم نعم۔ (۶۱)

       میں نے حضرت عمر فاروق اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے سنا کہ حضرت عبدالرحمن بن عوف ،حضرت طلحہ ،حضرت زبیر بن العوام اور حضرت سعد بن ابی وقاص رضی اللہ تعالیٰ عنہم  سے فرمایا: میں تمہیں اللہ تعالیٰ کی قسم دیکر پوچھتا ہوں جسکی قدرت سے زمین و  آسمان قائم ہیں ،کیا تم جانتے ہو کہ حضور نبی کریم صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا تھا :۔

       ہماری وراثت تقسیم نہیں ہوتی ،ہم جومال چھوڑیں وہ صدقہ ہے ۔ اس پر ان سب نے فرمایا : ہاں خداکی قسم ہمیں اس حدیث پاک کاعلم ہے ۔

       حضرت عمرفاروق اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے  جومنہاج وطریقہ حدیث رسول کی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۶۰۔    ضیاء النبی                             ۷/۱۰۰

۶۱۔     المسند لا  حمد بن حنبل،                ۱/۴۴

 حفاظت وصیانت کیلئے مقرر فرمایا تھا اس پر آپکے بعد امیرالمومنین حضرت عثمان غنی رضی اللہ تعالیٰ عنہ بھی سختی سے قائم رہے ،آپ نے ایک موقع پر ارشادفرمایا تھا ۔

        لایحل لاحد یروی حدثنا عن رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم لم اسمع بہ فی عہد ابی بکر ولاعمر ،رضی اللہ تعالیٰ عنہما۔

       کسی شخص کو ایسی حدیث روایت کرنے کی اجازت نہیں جو میںنے ابوبکروعمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما کے زمانوں



Total Pages: 604

Go To