$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

انسانوں کی زندگیوں میں نافذ کردیا

جائے ؟

       اقوام متحدہ کاحقوق انسانی کا چار ٹر بلاشبہ عمدہ ترین شکلوں میں مدون ہے ،لیکن اس عمدہ تدوین کے باوجود وہ انہیں ممالک میں زندہ ہے جہاں یہ حقوق انسانی عملاً بھی نافذ ہیں ۔ جن ممالک میں جنگل کاقانون رائج ہے ، جہاں طاقتورجوکچھ کرنا چاہے اسے عملاً اس کا حق حاصل ہے اور کمزور کو جینے کا حق بھی نہیں دیاجاتا ،وہاں اقوام متحدہ کے حقوق انسانی کے چارٹر کوکوئی نہیں جانتا ۔ان ممالک کے غریب انسانوں کیلئے اس چارٹر کی مردہ لاش کی کوئی حیثیت نہیں ۔جن ممالک میں یہ حقوق عملاً نافذ ہیں وہاں کوئی شخص ان میں تحریف یاتبدیلی کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکتا ، لیکن جن ممالک میں یہ عملا نافذ نہیں اور صرف چند قانون داں انکو جانتے ہیں وہاں انکی حالت کو بگاڑ کرپیش کرنا کسی قسمت آزما کیلئے مشکل نہیں ۔یہ ہی  وجہ ہے کہ اسلام میں  احادیث طیبہ کی حفاظت کیلئے سب سے پہلے یہ طریقہ اختیار کیا کہ لاکھوں انسانوں کے سینوں میں انکو محفوظ کرکے کروڑوں انسانوں کی زندگیوں میں انہیں نافذ کردیا ۔ آندھیاں چلتی رہیں ، طوفان اٹھتے رہے ،ملت اسلامیہ سیاسی اور عسکری طور پر کمزور ہوتی رہی لیکن ہدایت انسان کا وہ چارٹر جو احادیث طیبہ کی شکل میں مدتوں کروڑوں انسانوں کی زندگیوں میں نافذ رہا ، نہ اسکی اہمیت کو ختم کیا جاسکا اور نہ ہی اسکو صفحہ ٔ ہستی سے مٹایا جاسکا ۔حقیقت یہ ہے کہ احادیث طیبہ کی

حفاظت کا یہ ایسا بے نظیر طریقہ ہے جو صرف ملت اسلامیہ ہی کا حصہ ہے ۔(۵۸)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۵۸۔     ضیاء النبی،         ۷/۹۷

 

 

صحابہ  حفاظت حدیث کی خاطر ایک سے زیادہ راویوں سے

شہادت لیتے

       صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین نے ان تمام چیزوں کے ساتھ اس بات پر بھی خاص زور دیا کہ حدیث رسول اور سنت مصطفی علیہ التحیۃ والثناء ہر قسم کے جھوٹ کی ملاوٹ اور شائیبہ تک سے پاک رہے ۔کیونکہ حضور نبی کریم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی طرف سے جہاں حدیث کو یاد کرنے، دوسروں تک پہونچانے اور عمل



Total Pages: 604

Go To
$footer_html