$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

کہ کوئی  آدمی قرآن پاک کی کوئی سورۃ پڑھے یاکسی سے پڑھنے کو کہے ۔

فاروق اعظم نے اشاعت حدیث کیلئے صحابہ کرام کو مامور فرمایا

       دورئہ حدیث کے علاوہ انفرادی طور پر بھی حدیثیں یاد کرنے کابڑا اہتمام تھا ۔ حفاظت حدیث کایہ شغل صرف عہد نبوی تک محدود نہیں رہابلکہ عہد صحابہ میں حصول حدیث ،حفظ حدیث

اوراشاعت حدیث کا شوق اپنے جوبن پرتھا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۸۔ فیوض الباری، مصنفہ مفتی محمود احمد  رضوی،  ۱/۲۰

 

 

        مستشرقین اورپھر انکے بعد منکرین حدیث نے اس بات پر خوب واویلا کیا ہے کہ حضرت فاروق اعظم نے احادیث کی اشاعت پر سخت پابندی لگادی تھی اور کوئی انکے دور میں اس کام کو نہیںکرسکتاتھا ،لیکن اس  بے بنیاد الزام کی حقیقت  قارئین   ملاحظہ فرماچکے ہیں یہاں

قدرے تفصیل سے اس مفروضہ کا رد وابطال مقصود ہے ۔

       حضرت فاروق اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے خلافت اسلامی کے گوشے گوشے میں حدیث پاک کی تعلیم کیلئے ایسے صحابہ کرام کو روانہ فرمایا جنکی پختگی سیرت اور بلندی کردار کے علاوہ   ان کی جلالت علمی تمام صحابہ کرام میں مسلم تھی ،حضرت شاہ ولی اللہ رحمۃ اللہ علیہ ازالۃ الخفاء

میں تحریر فرماتے ہیں ۔

       چنانکہ فاروق اعظم عبداللہ بن مسعود راباجمعے بکوفہ فرستاد ، ومغفل بن یسار وعبداللہ بن مغفل وعمران بن حصین را بہ بصرہ ،وعبادہ بن صامت وابودرداء رابشام ،وبہ معاویہ بن سفیان کہ

امیرشام بود قد غن بلیغ نوشت کہ از حدیث ایشاں تجاوز نہ کند ۔

       قرآن وسنت کی تعلیم کیلئے حضرت فاروق اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ کوایک جماعت کے ساتھ کوفہ بھیجا ۔مغفل بن یسار  ، عبداللہ بن مغفل اورعمران بن حصین کو بصرہ ۔ عبادہ بن صامت اور ابودرداء کو شام بھیجا ۔ اور حضرت امیر معاویہ کو جو اس وقت شام  کے  گورنر تھے سخت تاکید ی حکم لکھا کہ یہ حضرات جو احادیث  بیان کریں ان

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html