$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

تعالیٰ علیہ وسلم 

رجوت ان یکون عندک منہ علم۔ (۴۷)

        ایک صحابی سفر کرکے حضرت فضالہ بن عبداللہ کے پاس مصر پہونچے ،اس وقت حضرت فضالہ اپنی اونٹنی کیلئے چارہ تیار کررہے تھے ،کہتے ہیں : مجھے دیکھ کر بیساختہ انہوں نے خوش آمدید

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۷۔    السنن للدارمی، 

کہا ، میں نے کہا: میں آپ سے محض ملاقات کیلئے نہیں آیا بلکہ میرامقصد یہ ہے کہ میں نے اور

آپ نے حضور سے ایک حدیث سنی تھی ،امید ہے کہ آپکو یادہوگی وہ مجھے سنائو ،

       اور حضرت ابوسعید خدری مشہور صحابی کے بارے میں تو کہاجاتاہے :۔

       ان ابا سعید رجل فی حرف ۔

       حضرت ابوسعید خدری نے تو محض ایک حرف حدیث کی تحقیق کیلئے باقاعدہ سفر کیا ۔

       یہ تمام واقعات اوران  جیسے صدہا واقعات اس چیز کا  بین ثبوت ہیں کہ صحابہ کرام کے درمیان احادیث کریمہ کے حفظ وضبط کا خصوصی اہتمام اورعام رواج تھا ،ہرشخص ممکنہ حد تک اس بات کیلئے مستعد رہتا کہ سنت رسول کاعلم جس طرح بھی ہوحاصل کیاجائے ،اسکا آپس میں

خوب ورد کیاجائے تاکہ سب لوگ اس سے بخوبی واقف ہوجائیں ۔

   صحابہ کرام آپس میں دورہ ٔ  حدیث کر تے  تھے

       حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں : ہم لوگ حضور اقدس  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے احادیث سنکر آپس میں دور کرتے ،ایک شخص بیان کرتا اور سب سنتے ،پھر دوسرے کی باری آتی اور پھر تیسراشخص سناتا ، بعض اوقات ساٹھ ساٹھ صحابہ کرام ایک مجلس میں اسی طرح آپس میں دور کیاکرتے تھے ،اسکے بعد جب مجلس سے اٹھتے توایسا

محسوس ہوتاتھا کہ حدیثیں ہمارے قلوب واذہان میں بودی  گئی ہیں ۔(۴۸)

       حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں : صحابہ کرام کہیں بیٹھے ہوتے توانکی گفتگو کا موضوع فقہ یعنی حضور اقدس صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی حدیثیں ہوتی تھیں ،یاپھر یہ

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html