Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

عام حالات میں بھی صحابہ کرام کا یہ معمول تھا کہ جو کچھ وہ سنتے یادیکھتے اسکو اپنے تک ہی محدود نہیں رکھتے تھے بلکہ کسی دوسرے کو ضرور سنادیتے تھے تاکہ کتمان علم نہ ہو جسکو وہ گناہ  تصور کرتے

تھے ۔

       حد تو یہ ہے کہ ازواج مطہرات رضی اللہ تعالیٰ عنھن خلوت کی باتیں بھی صحابہ کو بتادیتی  تھیں ، کیونکہ ان سب کا یہ ہی اعتقاد تھا کہ یہ سب کچھ بھی بلاشبہ شریعت ہیں ۔اگر ان کو چھپایاگیا تو پھر امت مسلمہ اپنے خانگی حالات اور خصوصی معاملات میں معلومات کیسے حاصل کرسکے گی ۔ اسلام ایک مکمل دستور حیات بنکر آیاہے جوزندگی کے تمام شعبوں کو محیط ہے ، مہد سے لیکر لحد تک کے جملہ احکام قدم قدم پر رہنمائی کیلئے موجود ہونا ضروری تھے ،لہذا ان حضرات نے اسی نقطۂ

نگاہ سے زندگی کے کسی گوشہ کو تشنہ نہیں رہنے دیا۔

       اس اجمالی تمہید کے بعد قارئین اسکی تفصیل میں جاکر ان تمام امورکا مشاہدہ اس دور کی مستند تاریخ وواقعات سے خود بھی کرسکتے ہیں ۔ جیساکہ عرض کیاجاچکا ہے کہ حفاظت حدیث کا فریضہ صحابہ کرام نے قول وعمل سے بھی انجام دیا اور لوح وقلم کے انمٹ نقوش کے ذریعہ بھی ۔ یہاں قدرے تفصیل سے میں قارئین کے سامنے دونوں پہلو رکھنا چاہتاہوں تاکہ ہمارے دعوی

پر مضبوط اور مستحکم دلائل سے روشنی پڑسکے ۔

       بارگاہ رسالت ست بلاواسطہ اکتساب فیض کرنے والے صحابہ کرام کی تعداد ایک لاکھ

سے متجاوز بتائی جاتی ہے ۔(۳۹)

        انکے صدق مقال اور حسن کردار میں کسی کوکیا شبہ ہوسکتا ہے ۔علامہ ابن حجر عسقلانی

فرماتے ہیں ۔

       قال ابن الصلاح : ثم ان الامۃ مجتمعۃ علی تعدیل جمیع الصحابۃ ومن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳۹۔    الاصاب لا بن حجر،                     ۱/۳

 

 

لابس الفتن ۔(۴۰)

 



Total Pages: 604

Go To