$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

۵۔     اتفاقی سند مختلف فیہ پر راجح رہیگی ،

 ۶۔    اکابر صحابہ کی روایت اصاغر صحابہ پرراجح قرار دی جائیگی ۔

       یہ بھی نہ ہوسکے تو دونوں احادیث کوجمع کرکے عمل کرینگے ۔

       بعض وجوہ جمع

 ۱۔    تنویع ،یعنی دونوں عام ہوں توالگ الگ انواع سے متعلق قرار دیاجائے ۔

 ۲۔   تبعیض ، یعنی دونوں خاص ہوں توالگ الگ حال پر ، یاایک کو حقیقت اوردوسرے

کومجاز پر محمول کرنا۔

 ۳۔    تقیید ،یعنی دونوں مطلق ہوں تو ہرایک کے ساتھ ایسی قید لگاناکہ فرق ہوجائے ۔

 ۴۔   تخصیص ،یعنی ایک عام اورایک خاص ہوتو عام کو مخصوص قراردینا ۔

 ۵۔   حمل ،یعنی ایک مطلق اورایک مقید ہوتو مطلق کو مقید پر محمول کرنا بشرطیکہ دونوں کا حکم اور

سبب ایک ہو ۔

       ان تما م ترتفصیلات کے بعد شاید ہی کوئی حدیث ملے جو حقیقی طور پر کسی دوسری حدیث سے متعارض ہو ۔ممانعت واجازت کی احادیث میں دفع تعارض کی تفصیل تدوین حدیث کے

عنوان  میں ملاحظہ کریں ۔

                        

                                               

XZXZXZXZXZXZX

XZXZXZXZXZX

XZXZXZXZX

حفاظت حدیث

       گذشتہ اوراق میں آپ ملاحظہ فرماچکے کہ علم حدیث کو حجت شرعی ہونے کی سند قرآن کریم سے ملی ہے ۔



Total Pages: 604

Go To
$footer_html