Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

کہاجائے توبے جا نہ ہوگا کہ اصل محافظت اسی وقت ممکن ہے جبکہ پہلے حفظ وضبط کا پورا اہتمام مقصود رہاہو ورنہ محض کتابت کو مدار حفاظت قرار دیاجائے توعلوم وفنون کا خداحافظ ۔خاص طور پر اس ماحول میں جبکہ کتابت کا رواج نہ پڑاہو اور عموما لوگ لکھنے کے عادی نہ رہے ہوں ۔ورنہ اصلی وجہ ممانعت وہی تھی کہ قرآن کو حدیث سے ممتاز رکھنا مقصود تھا کہ لوگ اختلاط سے کام نہ لیں ۔اس موضوع پر مکمل بحث تدوین حدیث اور حفاظت حدیث کے تحت آرہی ہے ،یہاں مجملا اتنا کافی ہے کہ   حضور کا عہد پاک ہو یاصحابہ وتابعین کازمانہ ان تمام ادوار میں کتابت کا کام بھی جزوی طور پررہا ہے جس پراعتراض کے ساتھ ساتھ بعد میں معترضین کوبھی اعتراف کرنا پڑا اور جن حضرات نے اسباب ہوتے ہوئے بھی یہ عظیم کام نہ کیا انکی مصلحتیں اپنی جگہ اہم تھیں ،بعد کے محدثین نے کتابت کے ذریعہ حفاطت وتدوین کا کام

انجام دیا وہ اس وقت کے ماحول کے عین مطابق تھا ۔

       شبہ ۶۔ حدیث کی جمع و تدوین ایک سوسال کے بعد عمل میں آئی جبکہ ان کا ریکارڈ

قابل حصول نہیں رہاتھا ۔

       جواب ۔ اس انوکھی نگارش کوکونسی تاریخ کانام دیاجائے ؟ تاریخ نویسی یاتاریخ سازی ۔اگر ایک انصاف پسند غیر متعصب واقعی تاریخ اٹھاکر دیکھنا چاہے توآج بھی وہ لٹریچر محفوظ ہے ،اور عہد نبوی سے خلیفۂ راشدحضرت عمربن عبدالعزیز تک ،اور انکے دورسے تدوین حدیث کے آخری مرحلہ تک سب کچھ آپ کو کتابوں میں ثبت ملیگا ،ایک دن بھی ایسا پیش

کرناناممکن ہے جس میں کتابت سے لیکر تدوین تک کوئی انقطاع ہواہو ۔

     شبہ ۷ ۔احادیث میں شدید اختلاف ہے ،لہذا قابل عمل نہیں ۔

     جواب۔ منکرین حدیث کو جب کچھ نہیں ملتا تووہی پرانی رٹ لگاتے ہیں کہ احادیث میں اسقدر اختلاف ہے جسکا ارتفاع ناممکن ،الفاظ ومعانی کے اختلاف نے سارا ذخیرہ غیر معتمد

بنادیاہے ۔

       ان چیزوں کی تفصیل تدوین حدیث کے ضمن میں ملاحظہ کرسکتے ہیں لیکن اس بات پر خاص توجہ رکھیں کہ



Total Pages: 604

Go To