Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

فرمائی ہے۔میں نے خوشی سے جُھومتے ہوئے عرض کی:امّی جان!میرے لئے کیا حکم ہے؟آ جاؤں یا30 دن کیلئے مَدَنی قافِلے کا مسافِر بنوں ؟ امّی جان نے فرمایا: بیٹا ! بے فِکْر ہو کر مَدَنی قافِلے میں سفر کرو۔اپنی مَدَنی مُنّی کی زیارت کی حسرت دل میں دبائے اَلْحَمْدُ لِلّٰہعزَّوَجَلَّمیں 30دن کے مَدَنی قافِلے میں عاشِقانِ رسول کے ساتھ روانہ ہوگیا۔اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ مَدَنی قافِلے میں سفر کی نیّت کی بَرَکت سے میری مُشکِل آسان ہو گئی تھی، مَدَنی قافِلوں کی بہاروں کی بَرَکت کے سبب گھر والوں کا بَہُت زبردست مَدَنی ذِہن بن گیا، حتّٰی کہ میرے بچوں کی امّی کا کہنا ہے، جب آپ مَدَنی قافِلے کے مسافِر ہوتے ہیں میں بچّوں سمیت اپنے آپ کو محفوظ تصوُّر کرتی ہوں۔

زچگی  آسان ہو،خوب  فیضان ہو                  غم کے سائے ڈھلیں ،قافِلے میں چلو

بیوی بچّے سبھی،خوب پائیں خوشی    خیریت  سے  رہیں ،قافِلے  میں چلو

 (اسلامی بہنوں کی نماز، ص۲۹۲  بتغیر قلیل)

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۵۶) قَبْر کا تصوُّر

          زم زم نگر حیدر آبادکے اسلامی بھائی محمد انیس عطّاری کا بیان کچھ یوں ہے:

 



Total Pages: 208

Go To