Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

وآلام دُور فرمائے۔ ٰ امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم     ؎ 

دعائے ولی میں یہ تاثیر دیکھی              بدلتی ہزاروں کی تقدیر دیکھی

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

مال سے بے رغبتی

          رکن شوریٰ حاجی ابو رضا محمد علی عطاری مدظلہ العالی کا بیان کچھ یوں ہے :حاجی زم زم رضا عطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری کے حُسنِ اَخلاق کی بدولت کیا غریب کیا امیر! سبھی ان کے گِروِیدہ تھے ،بڑے بڑے سیٹھ ان سے رابِطے میں رہتے تھے ،یہ ان پر دعوتِ اسلامی کے مَدَنی کاموں کیلئے عطیات کے تعلُّق سے انفِرادی کوشش تو کیا کرتے مگر اپنی ذات کے لئے ’’ترکیبیں ‘‘ نہ فرماتے۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                           صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

ذاتی سُواری نہیں تھی

          انہی رُکنِ شوریٰ کا بیان کچھ یوں ہے :ان کو موٹر سائیکل مکمَّل طور پر چلانا نہیں آتی تھی اور نہ ہی کار ڈرائیونگ آتی تھی مگر یہ رِکشے، تانگے اور کسی اسلامی بھائی کے ساتھ موٹرسائیکل پر مختلف عَلاقوں میں مَدَنی کاموں کے لئے جایا کرتے تھے ۔ مجھے یاد نہیں پڑتا کہ کبھی کسی سے بیان وغیرہ کے لئے سُواری کا مطالبہ کیا ہو کہ سُواری بھیجو گے تو آپ کے عَلاقے میں آؤں گا۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔


 

 



Total Pages: 208

Go To