Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۴۵) پریشان نہ ہونے دیا

          مرکزالاولیاء (لاہور)کے اسلامی بھائی محمد احتشام کا بیان ہے کہ ہماری رَمَضان المبارک میں حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری کی عیادت کیلئے حاضری ہوئی تھی۔ آپ شدید تکلیف میں تھے ، ٹھیک سے بیٹھ یا لیٹ بھی نہیں پارہے تھے ۔اتنے میں آپ کے گھر سے فون آگیا۔ آپ نے سنبھل کر اپنے گھر والوں سے بہت اطمینان سے بات کی اور انہیں تسلی دی ۔بعد میں ہم سے فرمانے لگے کہ میں اگر اپنے گھروالوں سے اس طرح بات نہ کروں تو وہ مزید پریشان ہوجائیں گے۔ پھر ہمیں قفلِ مدینہ لگانے اور لکھ کر گفتگو کرنے کے حوالے سے مَدَنی پھول ارشاد فرمائے۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                   صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۴۶) بیماری میں بھی خوش اخلاق رہے

          حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباریکے بچوں کی امی کا بیان ہے کہ بیماری میں بسا اوقات انسان میں چڑچڑا پن آجاتا ہے مگر شدید تکلیف میں بھی ان کے مزاج میں ذرا بھی چڑچڑا پن دکھائی نہیں دیتا تھا ۔اَسپتال کے عملے والوں سے بھی مسکرا مسکرا کر بات کرتے تھے اور بارہا ان سے کہتے:آپ میرا بَہُت خیال رکھتے ہیں ،اللہ عَزَّوَجَلَّ آپ کو جزائے خیر عطافرمائے۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 



Total Pages: 208

Go To