Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

کرنا چاہئے ، بِلا ضَرورت کسی پر اس کا اظہار بھی نہ کیا جائے کہ کہیں شِکوے کی آفت میں نہ جا پڑے اور آتا ثواب ہاتھ سے نہ نکل جائے۔ بعض اوقات تھوڑی سی پریشانی یا بیماری بھی بَہُت بڑا ثواب دلا دیتی ہے۔چنانچہ حضرت بریدہ اسلمی رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے  سیِّدُ الْمُبلِّغِین، رَحْمَۃ لِّلْعٰلَمِیْنصلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمکو فرماتے ہوئے سنا:’’مسلمان کو جو مصیبت پہنچتی ہے حتی کہ کانٹا بھی چبھے تو اس کی وجہ سے یاتو اللہ عَزَّوَجَلَّاس کا کوئی ایساگناہ مٹادیتا ہے جس کا مٹانا اسی مصیبت پر موقوف تھا یا اسے کوئی بزرگی عنایت فرماتا ہے کہ بندہ اس مصیبت کے علاوہ کسی اور ذریعے سے اس تک نہ پہنچ پاتا ۔‘‘

(موسوعۃ للامام ابن ابی الدنیا،کتاب المرض والکفارات ۴/ ۲۹۳،الحدیث۲۴۲ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 مصیبت کی حکمت

          حضورِاکرم،نُورِمُجَسَّم، شاہِ بنی آدم صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمنے   ارشاد فرمایا: بندے کے لئے علمِ ا لٰہیعَزَّوَجَلَّ میں جب کوئی مرتبۂ کمال مقدر ہوتا ہے اور اپنے عمل سے اس مرتبے کو نہیں پہنچتا تواللہ عَزَّوَجَلَّ اس کے جسم یا مال یا اولاد پر مصیبت ڈالتا ہے پھر اس پر صبر عطا فرماتا ہے یہاں تک اسے اس مرتبے تک پہنچا دیتا ہے جو اس کے لئے علمِ ا لٰہی میں مقدر ہو چکا ہے۔

 (سنن ابی داوٗد،کتاب الجنائز،باب الامراض۔۔الخ،۳/۲۴۶، الحدیث ۳۰۹۰)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                 صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 



Total Pages: 208

Go To