Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۴۳) صبرورِضا کا پیکر

          حاجی ابوجُنیدزم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری کے بچوں کی امی کا بیان کچھ اس طرح ہے کہ مرحوم چند سالوں سے پِتّا،پتھری اور السر وغیرہ کے اَمراض میں مبتلا رہے ، اس دوران ان کا آپریشن بھی ہوا لیکن اس مرتبہ مرض (یعنی مرض الموت)میں بہت تکلیف تھی ،خون کی اُلٹیاں اس قدر ہوتی تھیں کہ دیکھی نہ جاتی تھیں ،تکلیف سے ان کے جسم سے اس قدر پسینہ نکلتا کہ لگتا جسم پر پانی ڈالا گیا ہے مگر صبر کا یہ عالَم تھا کہ فرماتے : ’’اللہ عَزَّوَجَلَّ کی طرف سے امتحان ہے ، اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ سب بہتر ہوجائے گا ۔‘‘

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۴۴) میں نے انہیں صابِرپایا

          زم زم نگر حیدر آبادکے اسلامی بھائی محمد ساجِد عطّاری کا بیان ہے کہ دورانِ علالت مجھے بھی کچھ عرصہ حاجی زم زم کے ساتھ دیکھ بھال اور خدمت کے لئے رہنے کی سعادت ملی ، عُموماً جب کسی مریض کو زیادہ چُبھن والا انجکشن لگایا جاتا ہے تو وہ کَراہتا ہے لیکن حاجی زم زم رضا عطاری پراللہ عَزَّوَجَلَّ   کی کروڑوں رحمتیں ہوں کہ آپ کے

 



Total Pages: 208

Go To