Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

پہاڑوں کے برابر ہیں تو انہیں اس ایک شخص کے رونے کی وجہ سے بخش دیا جاتا کیونکہ فرشتے بھی اس کے ساتھ رو رہے تھے اور دُعا کر رہے تھے :اللہُمَّ شَفِّعِ الْبَکَّائِیْنَ فِیْمَنْ لَّمْ یَبْکِیعنی اے اللہ عزوجل! نہ رونے والوں کے حق میں رونے والوں کی شَفاعت قَبول فرما۔

(شُعَبُ الْاِیمان،۱/۴۹۴،الحدیث ۸۱۰)

مِرے اَشک بہتے رہیں کاش ہر دم                            تِرے خوف سے یاخدا یاالٰہی

تِرے خوف سے تیرے ڈر سے ہمیشہ                     میں تھرتھر رہوں کانپتا یاالٰہی

(وسائلِ بخشش ص۷۸)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۳۵)اسلامی بھائی کی نیند میں خلل نہ پڑے

          محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباریحُقُوقُ الْعِباد کے حوالے سے بے حد حُسّاس تھے ، چنانچِہ باب المدینہ(کراچی )میں مُقیم مبلغِ دعوتِ اسلامی حاجی فیاض عطّاری کا بیان ہے کہ ہم ایک مرتبہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کی عِیادت کے لئے نمازِ فجر کے بعد فیضان مدینہ باب المدینہ کراچی کے مُسَتشفیٰ میں پہنچے تو ہمیں اشاروں سے تاکید کی کہ آواز بلند نہ کیجئے گا تاکہ سامنے سوئے ہوئے اسلامی بھائی کی نیند میں خلل نہ پڑے ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                 صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 



Total Pages: 208

Go To