Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری تحریری کام کے سلسلے میں المدینۃ العلمیۃ تشریف لاتے تو قبلہ رُخ بیٹھنے کی کوشش فرماتے،جب کبھی ان کے ساتھ کھانا کھانے کا موقع ملا تب بھی اکثر قبلہ رُخ بیٹھا کرتے تھے ۔اسی طرح دعوتِ اسلامی کی مجلس لنگررسائل کے ذمہ داراسلامی بھائی محمد عرفان عطاری کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری کایہ انداز دیکھا کہ کھا نے کے لئے دسترخوان قبلہ رُو نہیں تھا آپ نے ترغیباً فرمایا کہ اس کو گھما کر قبلے کی سَمت کرلیجئے اور ہمیں یہ ذہن دیا کہ قبلہ رُو بیٹھناچاہئے اور مَدَنی انعامات پر عمل کے حوالے سے ترغیب دلائی ۔ شعَزَّوَجَلَّ ان کے دَرَجات بُلند فرمائے۔

اٰمِین بِجاہِ النَّبِیِّ الْامین صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۳۴) محبوبِ عطّار کی اشک باریاں

(مع نگران شوریٰ کے تأثرات)

          مبلغِ دعوتِ اسلامی ،نگرانِ مرکزی مجلسِ شوریٰ ، حضرت مولانا حاجی ابو حامد، محمدعمران عطاری مدظلہ العالی کا بیان ہے کہ محبوبِ عطّار علیہ رحمۃُ اللہ الغفّار  رقیق القلب تھے،میں نے ان کو کئی مرتبہ روتے دیکھا ہے ،جب قرآنِ پاک کی تلاوت اور اس کا ترجَمہ و تفسیر بیان ہوتا توبسااوقات ان کے آنسو نکل آتے تھے ،جب کبھی خوفِ خدا  اورقبروآخرت کی ہولناکیوں کاتذکرہ ہوتا تومیں نے ایک نہیں کئی مرتبہ دیکھا ہے کہ یہ

 



Total Pages: 208

Go To