Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

بس ایک ذہن بن گیا تھا کہ امیر اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ اسے پسند فرماتے ہیں تو ’’پیر کی پسند اپنی پسند۔‘‘

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۲۶) نَرسوں کی وجہ سے آنکھیں بند کرلیتے

          مختلف اسلامی بھائیوں کا بیان ہے کہ ہم جب حاجی زم زم رضا عطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری کو اَسپتال لے کر جاتے تو وہ اکثر اپنی آنکھیں بند کر لیا کرتے تھے اور اس کی وَضاحت کچھ یوں فرماتے کہ اَسپتال میں نرسیں وغیرہ ہوتی ہیں میں ڈرتا ہوں کہیں ایسا نہ ہوکہ ان پر نگاہ پڑے اور اسی حالت میں میری رُوح پرواز کرجائے۔  رکن شوریٰ حاجی ابو رضا محمد علی عطاری مدظلہ العالی کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ میں اَسپتال میں ان کی عِیادت کے لئے موجود تھا ،اِس دَوران میں نے دیکھاکہ یہ بار بار آنکھیں بند کررہے ہیں۔میں سمجھا شاید ان کو نیند آرہی ہے ،چنانچِہ میں نے اجازت چاہی کہ آپ سوجائیے میں چلتا ہوں ، تو فرمایا :آپ تشریف رکھئے ، مجھے نیند نہیں آرہی بلکہ نرسوں کے سامنے آنے کے اندیشے پر آنکھیں بند کرلیتا ہوں تاکہ ان پر نگاہ نہ پڑے ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 



Total Pages: 208

Go To