Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

حاصل ہوئی اور اعمالِ صالحہ کا جذبہ نصیب ہوا ۔ میں نے نیّت کی ہے کہ اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ وَجَلَّ   آیَندہ میری کوئی بھی نماز قضا نہیں ہوگی۔

٭  قُصُور(پنجاب پاکستان ) کے ایک اسلامی بھائی نادر رضوی کا بیان ہے کہ مَدَنی چینل پر مرحوم رکنِ شوریٰ محبوبِ عطار تاجدار مَدَنی انعامات حاجی زمزم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہ الباری کی سوانِحِ حیات سُن کرجنازے اورتدفین کے پُرکیف مناظِر دیکھ کر میری قلبی کیفیت تبدیل ہوگئی ہے ، اَلْحَمْدُلِلّٰہِ   عَزَّ وَجَلَّ !میں نے تاحیات عمامہ سجانے کی نیت کی ہے۔   

(۱۲۰)زم زم بھائی نے مجھے بچا لیا

٭ زم زم نگر(حیدر آباد باب الاسلام سندھ )کے اسلامی بھائی غلام فرید عطّاری کا بیان ہے کہ محبوبِ عطاررَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِکا مجھ پربہت بڑا احسان ہے کہ انہوں نے مجھے بدمذہبوں کے چُنگل سے چھڑا کر دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابَستہ کیا  ۔

 اَلْحَمْدُللّٰہ  عَزَّ وَجَلَّ ! مجھے مَدَنی ماحول میں تقریباً بیس سال ہوگئے، میں 17سال سے ایک ہی مسجِد میں امامت کرنے کی سعادت پا رہا ہوں ، یہ میرے زم زم بھائی کا صدقہ ہے ، اللہ   تَعَالٰی مجھے ایمان پر عافیت کے ساتھ موت نصیب کرے۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

بَقِیَّہ عُمر مَدَنی کام کرتے ہوئے گزاروں گا

٭  مِٹھیاں (کھاریاں ، پنجاب پاکستان)کے ایک اسلامی بھائی محمد سعید عطاری نے مدنی چینل کو اپنے تأثرات کچھ یوں ریکارڈ کروائے کہ مجھے اٹھارہ سال ہوگئے دعوتِ اسلامی میں کچھ خاص کام نہیں کرسکا، مدنی چینل پر حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہ الباری کا ذکرِخیر دیکھ کر ان کے کام کی مَدَنی بہاریں اور اِیصال ثواب کے خزانے دیکھ کر میں نیت کرتا ہوں کہ جو عمر باقی بچی ہے اب خوب خوب دعوتِ اسلامی کا مَدَنی کام کروں گا اور اسی جمعے سے مَدَنی قافلے میں سفر کی نیت بھی کرتا ہوں ۔   

مَدَنی کام کیا کروں گی

        ٭ صادِق آباد(پنجاب)کی ایک اسلامی بہن کا بیان کچھ اس طرح ہے کہ پہلے میں دعوتِ اسلامی کا خوب مَدَنی کام کیا کرتی تھی ، مَدَنی انعامات کا رسالہ بھی پُر کر کے جمع کرواتی اورروزانہ فیضانِ سنّت سے چار’’گھردرس‘‘دیا کرتی تھی ، پھر میرے والد صاحب کا انتقال ہوگیا اور میں ہمت ہار بیٹھی اور سارا مَدَنی کام چھوڑ دیا ۔ مَدَنی انعامات کے تاجدار، محبوبِ عطّار حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری  کے وصال پرمَدَنی چینل کے ذریعے  امیرِ اہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ وارکین شوریٰ کی ان کے لئے مَحَبَّتیں ، مَدَنی قافِلوں اور اِیصالِ ثواب کی بہاریں دیکھ کر میں نے پکی نیت کی ہے کہ اب میں دوبارہ دعوتِ اسلامی کا مَدَنی کام کرنا شروع کردوں گی،  اللہ رب العزت مجھے اس پر استقامت عنایت فرمائے ۔

اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو ۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !              صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۱۲۱)محبوبِ عطّار پر انفرادی کوشش کرنے والے اسلامی بھائی کے تاثرات وحکایات

        زم زم نگر حیدرآباد (باب الاسلام سندھ )کے اسلامی بھائی محمد نعیم عطّاری کے بیان کا لبِّ لباب ہے کہ یہ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ   کا مجھ گناہ گار پر بڑا احسان ہے اور اس کا فضلِ عظیم ہے کہ مجھے آج سے تقریباََ21سال پہلے ہیرآباد (زم زم نگرحیدر آباد)کے عَلاقے کی ذمّے داری ملی اورمیں نے جب وہاں مَدَنی کام کی شُروعات کی تو کسی نے مجھ سے کہاکہ یہاں پر جاوید بھائی   [1]؎ رہتے ہیں جو پہلے دعوت اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابَستہ تھے لیکن اب دُور ہوچکے ہیں مگر ہیں بہت سمجھدار ! آپ ان سے ملاقات کرلیں ہوسکتا ہے وہ دوبارہ ماحول میں آجائیں  ۔ جب میں کچھ اسلامی بھائیوں کو ساتھ لے کر حاجی زم زم رضا عطاریعلیہ رحمۃُ اللہ الباری کے گھر پہنچا اور ان سے ملاقات کی تو انہوں نے فوراًہماری دعوت قبول کی اور مَدَنی ماحول سے دوبارہ وابَستہ ہوگئے اور اتنے اچھے انداز میں مَدَنی کام کیا کہ ہمیں ان پر رشک آتا تھا کہ ماشاء اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  انہوں نے ہم سب کو  پیچھے چھوڑ دیا ہے ۔ ان میں شکریہ ادا کرنے کا اتنا جذبہ تھا کہ21سال میں جب بھی میری ان سے ملاقات ہوتی یا میں ان کے ساتھ ہوتا تودوسروں سے میرا تعارُف اِس طرح کرواتے کہ یہ میرے محسن ہیں اور ان کا مجھ پر احسان ہے کہ یہ مجھے مَدَنی ماحول میں لائے، یہ میرے استاد ہیں اور ان کی یہ کیفیت آخِر تک رہی  ۔ میں بارہا ان کو روکتا تھا لیکن یہ فرماتے : ’’اگر آپ نے مجھ پر انفرادی کوشش نہ کی ہوتی تو نہ جانے میں آج کہاں ہوتا!‘‘اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   مجھے مَدَنی انعامات کے تاجدار ، محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری کی برکتوں سے مالامال فرمائے ۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !        صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! ہمیں بھی چاہئے کہ جو اسلامی بھائی مدنی ماحول سے دور ہوگئے ہوں ، انہیں فراموش نہ کریں ، ان پرضرور انفرادی کوشش فرمائیں کہ بعض ان میں انمول ہیرے تو بعض روشن ستارے بن کر ابھر سکتے ہیں جس سے اُن کی اور آپ کی آخرت سنور سکتی ہے ۔مدنی انعام نمبر 55کے مطابق ہفتے میں کم ازکم ایک بچھڑے ہوئے اسلامی بھائی پر انفرادی کوشش کرنی ہوتی ہے ۔آپ بھی اس مدنی انعام پرعمل کیجئے ، شایدزم زم بھائی نُما کوئی چمکدار ہیراآپ کے بھی ہاتھ لگ جائے!

مَدَنی ماحول سے وابستہ رہئے

        زم زم نگرحیدر آباد کے اسلامی بھائی مزیدفرماتے ہیں کہ حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہ البارینئے اور پرانے اسلامی بھائیوں کو یہ ترغیب دیتے رہتے تھے کہ آپ اپنے آپ کو مَدَنی



1        حاجی:زم زم رضاعطاری کانام پہلے جاوید تھا  شیخِ طریقت امیرِ اہلسنّت بانیٔ دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطارؔ قادری دامت برکاتہم العالیہ نے تبدیل کرکے ان کانام محمدکردیااورعُرف یعنی پہچان کیلئے عام نام’’زم زم رضا‘‘رکھا۔



Total Pages: 51

Go To