Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

۱۴۳۳ ھ فیضانِ مدینہ مُستَشفٰی میں بسترِعلالت پر تھے تو میں نے انہیں  امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ کا نیا رسالہ ’’کراماتِ شیرِ خدا ‘‘پیش کیا تو خوشی سے جُھوم اُٹھے اور میرا شکریہ ادا کیا ، اسی طرح  امیرِاہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ کا’’حبِّ جاہ ‘‘ کے عنوان پر پمفلٹ شائِع ہوا تو وہ بھی بڑے شوق سے مجھ سے حاصل کیا اور اس کا مُطالَعہ کیا ۔اِسی طرح’’ مجلس تَراجِم‘‘کے نگران، رکن شوریٰ حاجی ابو میلاد، برکت علی عطاری مدظلہ العالی کا بیان ہے کہ  امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ  کی کُتُب ورسائل کا تَرجَمہ شائع ہونے پر عُمُوماًہماری حوصلہ افزائی فرمایا کرتے تھے اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                 صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۲۲) کتابیں پڑھنے کی ترغیب دلایا کرتے

          کوٹ عطاری(کوٹری ، باب الاسلام سندھ) کے اسلامی بھائی محمد جنید عطاری کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ باب الاسلام (سندھ)کے شہر’’ میرپور خاص‘‘ مَدَنی مشورے میں شرکت کے لئے رکنِ شوریٰ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کے ہمراہ سفر کی سعادت حاصل ہوئی۔ روانگی کے وَقْت انہوں نے مکتبۃالمدینہ سے ’’قوم جِنّات اور امیر اہلسنّت‘‘ 26عددکتابیں خریدفرمائِیں اور میرپور خاص کے مَدَنی مشورے کے دوران اس کی ایسی ترغیب دلائی کہ وہ تمام کتابیں ذمّے داران نے

 



Total Pages: 208

Go To