Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری اور پندرہویں صدی کی عظیم علمی و روحانی شخصیت شیخِ طریقت، امیرِ اَہلسنّت ، بانیِ دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا محمد الیاس عطار قادِری رَضَوی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کی نسبت حاصل ہے ۔

٭25 صَفَرُ المُظَفَّر کوامامِ اَہلسنّت رحمۃاللہ تعالٰی علیہ کا ’’یومِ عرس‘‘ ہے۔

٭26  رَمَضانُ المبارَک۱۳۶۹ھ امیرِ اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کا’’یومِ ولادت‘‘ ہے۔لہٰذا ہرمَدَنی ماہ کی 25تاریخ کو  ’’  عُرسِ امامِ اَہلسنّترحمۃاللہ تعالٰی علیہ ‘‘    اور26 تاریخ کو ’’ یومِ ولادتِ امیرِ اَہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ‘‘  دئیے گئے طریقہ کار کے مطابق منانے کا اہتمام کیجئے۔

 ہر ماہ یومِ رَضا  کی د ھوم

        ہر مَدَنی ماہ کی25تاریخ کوعمر بھر پنج وَقْتہ باجماعت نماز ادا کرنے کی نِیت کے ساتھ نمازِ عَصْرمع سنتِ قبلیہ پہلی صف میں ادا فرمائیں اور نیّت کر لیجئے کہ اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ   فُضول باتوں سے بچنے اور خاموشی کی عادت بنانے کے لئے عَصْر تا مغرب صرف لکھ کر یا اشارے سے کام چلا نے کی کوشش کرونگا۔ضَرورتاً بولنا پڑا تو کم سے کم لفظوں میں گفتگو نمٹاؤں گا ۔ اس د و ر ا ن پریشان نظری اور بد نگاہی سے بچنے کی نیت سے نگاہیں جھکا کر رکھنے کی عادت بنانے کے لئے قُفلِ مدینہ کا عینک بھی استعمال کرونگا۔عَلاقائی دورہ برائے نیکی کی دعوت میں شرکت کرونگایا مریض یا دُکھی کی گھر یااسپتال جا کرسُنّت کے مطابق غم خواری کرونگا اور اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ   اِن تمام اُمور کا ثواب اعلیٰ حضرت رحمۃاللہ تعالٰی علیہ کو ایصال کرونگا ۔

ہر ماہ ولاد تِ امیرِ اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کی د ھوم

     دھڑکتے دل کے ساتھ غروبِ آفتاب کے منتظر رہیں کہ’’26ویں شب‘‘کی آمد ہے۔نمازِ مغرب پہلی صف میں مع نفل اَوابین و صلوٰۃ التوبہ پڑھ کر سابقہ تمام گناہوں سے توبہ کرکے آیندہ زندگی ’’رِضائے رَبّ الانام کے مَدَنی کام ‘‘کےمطابق گزارنے یعنی عطار کا دوست، پیارا ، محبوب اور منظورِ نظر بننے کی نیّت کے ساتھ’’26ویں شریف‘‘ کا استقبال کیجئے  ۔ ولادت ِامیرِ اَہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہکی خوشی میں سورۂ مُلک شریف و سورۂ یٰسٓ شریف کی تلاوت کے بعد فکرِ مدینہ(یعنی مَدَنی انعامات کے رسالے میں دئیے گئے خانے پُر )کرتے ہوئے اس طرح تصورِ مُرشِد کیجئے کہ امیرِ اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہمجھ سے بذریعہ مَدَ نی انعامات سُوالات فرما رہے ہیں اورمیں ان کی بارگاہ میں جوابات عرض کر رہا ہوں ۔ 26عددمَدَنی انعامات کے رسالے حاصل کر کے تقسیم اور مَدَنی ماہ کے اختتام پر وُصول کرنے کی  نیت کے ساتھ قفلِ مدینہ پیڈ پر آیندہ ماہ اپنی مَدَنی قافِلے میں سفر کی تاریخ بھی نوٹ کیجیے اس مَدَنی ترکیب کے نفاذ سے آپ کے علاقے میں دعوتِ اسلامی کے2  کام مَدَنی قافلہ و مَدَنی انعام کے تو اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ   پَرلگ جائیں گے اور یہ بے ساختہ مدینہ منورہ کی طرف اڑنا شروع کر دیں گے  ۔ پھر شَجَرۂ عالیہ پڑھ کر سلسلۂ عالیہ قادِریہ رَضَویہ عطاریہ کے مشائخِ کرام  رَحِمَہُمُ اللہ تعالٰیکے لئے فاتحہ اور ایصالِ ثواب کی ترکیب بنائیں ۔ لنگر ِرَسائل (یعنی مکتبۃ المدینہ کے شائع کردہ رسائل کی تقسیم )بھی اِیصالِ ثواب کا بہترین ذریعہ ہے ۔

         اَ لْحَمْدُ للّٰہ عَزَّ وَجَلَّ اِس ترکیب سے تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں ہرمَدَنی ماہ کی 25اور26 تاریخ کو یومِ رَضا منانے کے ساتھ ساتھ  امیراَہلسنّت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہکے یومِ ولادت کی بَرَکتوں سے بھی مستفیض ہو سکتے ہیں ۔(اسلامی بہنیں حسبِ ضَرورت ترمیم کرلیں )

 (نوٹ : پچیسویں چھبیسویں کا یہ پرچہ مکتبۃ المدینہ سے ھدیۃ حاصل کیا جاسکتا ہے  )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !       صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

امیراہلسنّت کے مَدَنی پھول اور مَدَنی انعامات

        مکتبۃ المدینہ کی مجلس کے ذمہ دار اسلامی بھائی حاجی فیاض عطّاری کا بیان ہے کہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری کی یہ کوشش ہوتی تھی کہ شیخِ طریقت امیرِ اہلسنّت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کے عطاکردہ مَدَنی پھول مَدَنی انعامات کا حصہ بن جائیں اور اسلامی بھائیوں کو عمل کرنے کا زیادہ موقع ملے ، چنانچہ امیرِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہنے کئی مَدَنی انعامات ان کی درخواست پر ترتیب دئیے مثلاً اچھی اچھی نیّتیں کرنے والا مَدَنی انعام، قبلہ رُخ بیٹھنے والا مَدَنی انعام ، مَدَنی چینل دیکھنے والا مَدَنی انعام وغیرہ  ۔ اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو ۔

 اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !         صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

 کس کے لئے کتنے مَدَ نی اِنعامات ؟

        پندرہویں صدی کی عظیم علمی وروحانی شخصیت، شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت ، بانیٔ دعوتِ اسلامی ، حضرت علّامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطار قادِری رضَو ی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے اس       پُر فتن دُور میں آسانی سے نیکیاں کرنے اور گُناہوں سے بچنے کے طریقوں پر مشتمل شریعت و طریقت کا جامع مجموعہ بنام ’’ مَدَنی انعامات ‘‘ اسلامی بھائیوں کیلئے72، اسلامی بہنوں کے لئے63، جا معۃ المدینہ  کے طلبہ کے لئے 92، طالبات کے لئے 83، مدنی منوں اور مدنی منیوں کے لئے 40، خصو صی (یعنی گو نگے اوربہرے)اسلامی بھائیوں کے لئے27مدنی انعامات بصورتِ سُوالاتعطا فرمائے ہیں ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !         صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۵۸)محبوبِ عطّار سراپا ترغیب تھے

        مدینۃ الاولیاء احمد آباد (الھند) کے ایک تنظیمی ذمّے دارمحمد امتیاز عطّاری کا بیان ہے کہ حاجی زمزم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہ الباری ’’مَدَنی انعامات‘‘ کے حوالے سے مدینۃ الاولیاء احمد



Total Pages: 51

Go To