Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

منتقل ہونے سے منع کردیا تواُنہوں نے والدہ کی اطاعت کی اور باب المدینہ کراچی میں رہائش اختیار نہیں کی ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

ماں کے حقّ کی اَہَمِّیَّت

          ایک شخص نے بارگاہِ رسالت میں حاضر ہوکر عرض کی:یارسول اللہصلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم! میرے حسنِ سلوک کا سب سے زیادہ حقدارکون ہے ؟ارشاد فرمایا:تمہاری ماں۔عرض کی : پھرکون؟فرمایا: تمہاری ماں۔عرض کی :پھر کون؟فرمایا: تمہاری ماں۔ عرض کی :پھر کون؟ارشاد فرمایا: تمہارے والد۔

(صحیح البخاری،کتاب الأدب، باب من أحق الناس بحسن الصحبۃ،۴/۹۳،الحدیث:۵۹۷۱)

           صَدرُ الشَّریعہ،بدرُ الطَّریقہحضرتِ  علّامہ مولانامفتی محمد امجد علی اعظمی علیہ رحمۃُ اللہِ القویفرماتے ہیں :یعنی احسان کرنے میں ماں کا مرتبہ باپ سے بھی تین دَرَجہ بلند ہے۔ (بہارشریعت، ۳/۵۵۱)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۹) مَدَنی ماحول سے کیسے وابَستہ ہوئے؟

          مَدَنی چینل کے سلسلے ’’کھلے آنکھ صلِّ علیٰ کہتے کہتے‘‘ میں حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے اپنے دعوتِ اسلامی سے وابَستہ ہونے کے بارے میں

 



Total Pages: 208

Go To