Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

بار ان کے ہاتھ پاؤں ضَرورچوماکریں۔ دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی ادارے مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ 1197 صَفحات پر مشتمل کتاب ، ’’بہارِ شریعت‘‘جلد3حصّہ 16 صَفْحَہ 445پر ہے:والِدہ کے قدم کو بوسہ بھی دے سکتا ہے، حدیث میں ہے:’’ جس نے اپنی والِدہ کا پاؤں چوما، توایسا ہے جیسے جنَّت کی چوکھٹ(یعنی دروازے) کو بوسہ دیا۔‘‘

  (دُرِّمُختار۹/۶۰۶)

          یقیناماں کی تعظیم کا بڑا دَرَجہ ہے ۔فرمانِ مُصطَفٰے صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم ہے:اَلْجَنَّۃُ تَحْتَ اَقْدَامِ الْاُمَّہَاتِ یعنی جنّت ماؤں کے قدموں کے نیچے ہے۔(الجامع الصغیر،ص۲۲۱،حدیث:۳۶۴۲)حضرتِ علّامہ عبدُالرّؤف مَناوی علیہ رحمۃُ اللہِ القویاس حدیثِ پاک کے تحت ’’فیضُ القدیر‘‘ میں تحریر فرماتے ہیں :یعنی ان کے لئے تواضع کرنااور ان کو راضی رکھناجنّت میں داخلے کا سبب ہے ۔

(فیضُ القدیر ۳/۴۷۷تحتَ الحدیث: ۳۶۴۲)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸) والِدہ کی اطاعت کی

          مبلغِ دعوتِ اسلامی ابو رجب محمد آصف عطاری مدنی کا بیان ہے کہ حاجی زم زم رضاعطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری کے وصال سے تقریباًسات آٹھ برس پہلے کی بات ہے کہ انہوں نے مَدَنی کاموں کے سلسلے میں باب المدینہ کراچی میں رہائش رکھنے کی ترکیب بنائی جس کے لئے مکان بھی دیکھ لیا گیا،لیکن ان کی والدہ نے انہیں حیدر آباد سے کراچی

 



Total Pages: 208

Go To