Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مَسلَک کا تُو اِمام ہے الیاس قادری

مسلک کا تُو اِمام ہے اِلیاس قادری                   تدبیر تیری تام ہے الیاس قادری

فکرِ رضا کو کر دیا عالَم پہ آشکار                        یہ تیرا اُونچا کام ہے الیاس قادری

سَر مستیٔ رضا کی ہر عالَم میں دھوم ہے               ساقیٔ دورِ جام ہے الیاس قادری

فیضانِ سنّتِ نبی پھیلاتا ہے تیری                    تحریک کو دَوام ہے الیاس قادری

امریکہ، یُورپ، ایشیائ، افریقہ ہر زمیں             کرتی تجھے سلام ہے الیاس قادری

سنّت کی خوشبؤوں سے زمانہ مہک اُٹھا                فیضان تیرا عام ہے الیاس قادری

سر پہ عمامہ ماتھے پہ سجدوں کا نور ہے                جو بھی تیرا غلام ہے الیاس قادری

ہے دعوتِ اسلامی کی دُنیا میں دھوم دھام            مقبول تیرا کام ہے الیاس قادری

تنہا چلا تُو ساتھ تِرے ہو گیا جہاں                    میٹھا تیرا کلام ہے الیاس قادری

سایہ ہے تِرے سر پہ دُعائے خواص کا                تُو مرجعِ عوام ہے الیاس قادری

ہے بدرِ ؔرضوی بھی تِرے کِردار کا اسیر               اِس کا تجھے سلام ہے الیاس قادری

مـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــدینہ

   ۱؎  :یہ کلام علامہ بدرالقادری مدظلہ العالی (ہالینڈ) نے ۲۶رمضان المبارک۱۴۳۱ھ کو جشنِ ولادتِ امیرِاہلِ سنَّت کے موقع پر بذریعہ ریکارڈڈ کال پیش کیا تھا۔

 



Total Pages: 208

Go To