Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۴۸) محبوبِ عطّار  علیہ رحمۃُ اللہ الغفّارکا تعزیت کا انداز

جب مسلمان کسی طرح کی بھی پریشانی سے دو چار ہو جائے تو اُس کی دلجوئی کرنا اسے تسلی دینا بَہُت بڑے ثواب کاکام ہے چُنانچِہ حُسنِ اَخلاق کے پیکر، نبیوں کے تاجور، رسولِ انور، مَحبوبِ رَبِّ اکبرصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا اِرشادِ رُوح پَرْوَر ہے : جو کسی غمزدہ شخص سے تعزیت کر ے گا اللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ اُسے تقوٰی کا لباس پہنائے گا اور رُوحو ں کے درمِیان اس کی رُوح پر رَحمت فرمائے گا اور جو کسی مصیبت زدہ سے تعزیت کریگا اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   اُسے جنّت کے جوڑوں میں سے دوایسے جوڑے پہنائے گا جن کی قیمت (ساری)دنیا بھی نہیں ہوسکتی ۔ (المعجم الاوسط، ۶/ ۴۲۹ ، الحدیث : ۹۲۹۲)

مَدَنی انعامات کے تاجدار ، محبوبِ عطّار علیہ رحمۃُ اللہ الغفّار دُکھی اور غمزدہ اسلامی بھائیوں کی اکثر دلجوئی کیا کرتے اور انہیں مَدَنی کام کرنے کی ترغیب بھی دیتے تھے ، چنانچِہ ایک اسلامی بھائی کے والِد صاحب کے انتِقال پربذریعۂ فون تعزیت کرتے ہوئے کچھ یوں فرمایا :  اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  آپ کے والد کی مغفرت فرمائے، ان کی قبر کو جنَّتُ البقیع میں منتقل فرمائے، آپ سب کو، ان کے لواحقین کو صَدَقۂ جاریہ بننے کی توفیق عطا فرمائے، نیک اولاد صدقۂ جاریہ ہے، اب یہ(یعنی فوت ہونے والے ) منتظر ہوتے ہیں کہ اولاد کی طرف سے کیا کیا ان کو ثواب پہنچتا ہے !اب آپ کو چاہئے کہ ہر گناہ سے بچتے ہوئے خوب خوب نیکیاں کیجئے پھر اپنے مرحوم ابو کوان کا ثواب اِیصال کردیجئے ۔ ابھی اسی جمعہ تین دن کامَدَنی قافلہ بھی سفر کررہا ہے جس میں میں بھی شامل ہوں اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ وَجَلَّ  ، ابو کے اِیصال ثواب کے لیے تین دن آپ بھی مَدَنی قافلے میں سفر کیجئے، مرحوم نے آپ کو پالا پوسا ، آپ کے لیے دُنیاوی طور پر کیا کیا ذرائع کرکے گئے، ان کے اِیصال ثواب کے لیے اگر آپ اسی جمعے کو ہمارے ساتھ سفر کرلیں تو مدینہ مدینہ ، ہمّت کیجئے اورجمعہ، ہفتہ اور اتوار تین دن کے لیے اپنا نام لکھوادیجئے !(اسلامی بھائی کے نام لکھوانے پر فرمایا : ) مَا شَآءَاللہ ! اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  آپ کوجزائے خیر عطا فرمائے۔

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! یہ ایک بہت پیارا انداز ہے کہ غم خواری، تعزیت اور ساتھ ہی دعوت اسلامی کے سنّتوں کی تربیت کے مَدَنی قافلوں میں سفر کی رغبت دلانا، اللہ کرے کہ ہمیں بھی یہ انداز نصیب ہوجائے ۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !    صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۴۹) حاجی زم زم ہمارے گھر تشریف لے آئے

        زم زم نگر حیدر آباد کے علاقے لطیف آباد کے اسلامی بھائی سیِّد راشِد حُسین عطاری کا بیان اپنے الفاظ وانداز میں عرض کرتا ہوں کہ ہماری والدہ جو کہ دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابستہ تھیں ، ان کا 17مئی 2011ء کی رات انتقال ہوا۔ہوا یوں کہ علاقے کا کوئی ذمّہ دار میری امّی کے جنازے میں نہ آسکا ، اس پر چھوٹے بھائی جو کہ مدنی انعامات کا ذمہ دار بھی ہے ، کا دل بہت دُکھا ۔ نہ جانے کیسے حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری کو اس بات کا پتا چل گیا اور وہ دیگر بڑے بڑے ذمہ دارانِ دعوتِ اسلامی کے ہمراہ تعزیت کے لئے ہمارے گھر تشریف لے آئے ۔ان کی آمد پر نہ صرف میرے بھائی کو تسلی ملی بلکہ بقیہ گھر والوں کو بھی قلبی اِطمینان نصیب ہوا  ۔ اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حسابمغفِرت ہو ۔

 اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !       صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۵۰) ہاتھ کی سُوجن جاتی رہی

        جامشورو(باب الاسلام سندھ) میں دعوتِ اسلامی کے ذمہ دار اسلامی بھائی محمد اویس عطاری کا بیان اپنے انداز والفاظ میں عرض کرتا ہوں کہ اس وقت مجھے مَدَنی ماحول سے وابستہ ہوئے شاید دوہفتے ہوئے ہوں گے جب میں نے 26گھنٹے کے لئے ہونے والے مَدَنی انعامات کے تربیتی اجتماع میں شریک ہونے کی سعادت پائی  ۔ اس اجتماع میں مَدَنی انعامات کے تاجدار ، محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری  اور دیگر مبلغین دعوتِ اسلامی ہماری تربیت فرمارہے تھے ۔ نمازِ عصر کے بعد جب حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری فنائے مسجدمیں آئے تو ایک اسلامی بھائی نے آگے بڑھ کر انہیں اپنا ہاتھ دکھایا اور عرض کی کہ بھاری سامان گرنے کی وجہ سے میرے ہاتھ پر چوٹ آئی ہے اور اس کی سُوجن نہیں جارہی جس کی وجہ سے میں اپنی ملازمت پر نہیں جاسکتا اور میری تنخواہ بھی کٹ رہی ہے ! آپ اس پر دَم کردیجئے۔حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری نے اس کے ہاتھ پر دَم کردیا  ۔  جب مغرب کا وقت ہوا تو وضو خانے میں وہی اسلامی بھائی میرے برابر آبیٹھے اور اسی ہاتھ سے ٹونٹی کھولی، میں نے حیرت سے پوچھا کہ کچھ دیر پہلے تو آپ کہہ رہے تھے کہ میں اس سے کوئی کام نہیں کرپاتا! تو انہوں نے فرمایا :  اَلْحَمْدُللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ ! حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباریکے دَم کرنے کی برکت سے میرے ہاتھ کی سُوجن بہت کم ہوگئی ہے اور اس نے کام کرنا بھی شروع کردیا ہے ۔

اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو ۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !           صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۵۱)  بِغیرآپریشن شِفا مل گئی

        وکیلوں اور ججوں میں دعوتِ اسلامی کا مَدَنی کام کرنے کے لئے بنائی گئی ’’مجلسِ وُکَلا‘‘ فاروق نگر (لاڑکانہ باب الاسلام پاکستان) کے رُکن عبدالواحد عطاری کا بیان کچھ یوں ہے کہ میرا ڈیڑھ سالہ بیٹا13  مئی 2012 کو گرمی کی شدت کی وجہ سے شدید بیمار ہوگیا ، اس کے پھیپھڑوں میں پانی بھر گیا تھاجس کی وجہ سے اَسپتال میں داخل کروانا پڑا جہاں وہ14دن زیرِعلاج رہا مگر حالت مزید خراب ہوگئی  ۔ چنانچِہ27 مئی2012کوہم اسے بابُ المدینہ کراچی کے ایک اچھے اَسپتال میں لے گئے جہاں وہ مزید 15دن زیرِ علاج رہا ۔بالآخر ڈاکٹروں نے کہا کہ بچّے کے پھیپھڑوں کا بڑا آپریشن ہوگا ۔یہ سن کر ہم بہت پریشان ہوئے ، انہی دنوں محبوبِ عطّار حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہ الباریمیرے بیٹے کی عیادت کرنے کے لئے اَسپتال تشریف لائے۔دعاکرنے کے بعد میرے بیٹے کو دَم کیا اور مجھے تسلّی دی کہ ہمّت رکھئے اِنْ شَآءَاللہ  عَزَّ وَجَلَّ   دواؤں سے ہی فائدہ ہوجائے گا، آپریشن نہیں کرنا پڑے گا۔دوسرے دن آپریشن سے پہلے ڈاکٹر نے جو ٹیسٹ کروائے اُن کی رپورٹ دیکھ کر



Total Pages: 51

Go To