Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

*عالَمی مَدَنی مرکزفیضانِ مدینہ باب المدینہ کراچی آتے تو کئی اسلامی بھائی ان کو دیکھ کر ملنے پَہُنچ جاتے اور دعاؤں کیلئے عَرْض کرتے * مذاق مسخری سے دُور تھے * سنجیدہ رہتے * خوفِ خدا رکھنے والے تھے اور گناہوں کے ارتکِاب سے ڈرتے تھے اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

دیگراسلامی بھائیوں کے تَأَثُّرات

          مَدَنی انعامات کے تاجدار، محبوبِ عطارحاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری  کے وصال کے بعد کثیر اسلامی بھائیوں نے ان کے بارے میں اپنے تَأَثُّرات مَدَنی چینل کو بھیجے ، ایسے ہی 14 تأثرات ملاحَظہ کیجئے :(جملوں میں حسبِ ضَرورت ترمیم کی گئی ہے)

          *راولپنڈی(پنجاب) کے ایک اسلامی بھائی ارسلان قادری کا کہنا ہے:  ہمارا حُسنِ ظن ہے کہ رکنِ شوریٰ و محبوب عطار حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباریبہت نیک وپرہیزگار اسلامی بھائی تھے، ہم مَدَنی چینل پر جب بھی انہیں دیکھتے تو وہ قفلِ مدینہ کی عینک لگائے رکھتے تھے اور یہ بہت اچھے انداز میں نیکی کی دعوت دیتے اور بہت اچھی زندگی گزاری اور اب مرحوم نگرانِ شوریٰ حاجی مشتاق عطاری اور مفتی ٔ دعوتِ اسلامی مفتی محمد فاروق عطاری رحمۃ اللہ تعالی علیہما کے پہلومیں دفن ہوئے


 

 



Total Pages: 208

Go To