Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

اچھے خواب بیان کرنے کی اجازت

        اچّھے خواب اچّھے ہی ہوتے ہیں ان کو بیان کرنے کی شَرْعاً اجازت ہے، چُنانچِہ فرمانِ مصطَفٰیصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم ہے:جب تم میں سے کوئی ایسا خواب دیکھے جو اسے پیارا معلوم ہو تو چاہیے کہ اس پر  اللہ  تعالٰی کی حَمْد بجالائے اور لوگوں کے سامنے بیان کرے۔(مُسندِ امام احمد ،۲/ ۵۰۲ الحدیث ۶۲۲۳ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

خواب بیان کرنے میں کیا نیّت ہونی چاہئے؟

          صحیح بخاری شریف کی سب سے پہلی حدیث ہے: اِنَّمَا الْاَعْمالُ بِالنِّیَّاتیعنی اعمال کا دارومدار نیّتوں پر ہے۔لہٰذا اگر کوئی حُبِّ جاہ کے باعث لوگوں کو اپنا خواب سُناتا، اپنی شہرت اور واہ واہ چاہتا ہے تو واقِعی مُجرِم ہے اور اگر اچّھی نیّت سے سُناتا ہے، مَثَلاً دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے متعلق کوئی ایمان افروز بِشارت ملی ،سنّتوں کی تربیت کے مَدَنی قافِلے میں سفر کے دوران کسی خوش نصیب نے اچھا خواب دیکھااب وہ اس لئے سنا رہا ہے کہ اِس پُر فِتن دور میں لوگوں کو راہِ خدا عَزََّّوَجَلََّّ میں سفر کی ترغیب ملے اور انہیں اطمینان کی دولت نصیب ہو کہ دعوتِ اسلامی  اَہلِ حق اور عاشِقانِ رسول کی سنتوں بھری مَدَنی تحریک ہے اور اس پراللہ و رَسُولعَزَّوَجَلَّ وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم کا خاص فضل و کرم ہے تو یوں وہ تبلیغِ قران وسنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تَحریک دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابَستہ ہوکر

 

 



Total Pages: 208

Go To