Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

بَرَکت نشان ہے:’’نُبُوَّت گئی، اب میرے بعدنُبُوَّت نہ ہوگی مگر بِشارَتیں۔‘‘ عرض کی گئی :’’ وہ کیا ہیں ؟‘‘ فرمایا:’’اچھے خواب  کہ نیک آدمی خود دیکھے یااُس کیلئے دیکھا جائے(یعنی دوسرا شخص اس کے متعلق خواب دیکھے)۔‘‘

(الموطّا لامام مالک ،۲/ ۴۴۰،الحدیث ۱۸۳۳ملتقطاً)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

مَدَنی اِہتمام

        اِمامِ اَہلسُنّت ،مُجَدِّدِ دین و مِلَّت،شاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیہِ رَحْمَۃُ الرَّحمن اپنے رسالے ’’صَفَائِحُ اللُّجَیْن فِی کَوْنِ التَّصَافُحِ بِکَفَّیِ الْیَدَیْن‘‘میں لوگوں کے آگے خواب بیان کرنے کے بارے میں تحریر فرماتے ہیں :اَحادیثِ صَحِیْحَہ سے ثابِت کہ حضورِ اقدس سیِّدعالم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم اِسے(یعنی خواب کو) اَمْرِ عظیم جانتے اور اِس کے سُننے ، پُوچھنے ، بتانے، بیان فرمانے میں نہایت دَرَجے کا اِہْتِمام فرماتے۔ صحیح بخاری وغیرہ میں حضرتِ سَمرہ بن جُنْدَب رضی اللہ تعالٰی عنہ سے ہے: حُضور پُر نور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم نَمازِ صُبْح پڑھ کر حاضِرین سے دریافْتْ فرماتے : ’’آج کی شب کسی نے کوئی خواب دیکھا؟‘‘جس (کسی) نے دیکھا ہوتا عرض کردیتا، حُضور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم تعبیر فرماتے۔

(صحیح بخاری ،۱ / ۴۶۷ الحدیث ۱۳۸۶ملتقطاً و فتاویٰٰ رضویہ ج۲۲،ص۲۷۰)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد


 

 



Total Pages: 208

Go To