Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(سکّھرپاکستان) کے ایک طالِبِ علم کے ساتھ سرکارِ رسالت مآب علیہ الصلوٰۃ والسلام کے روضہ ٔ مبارکہ کے سامنے پایا ۔میں نے دیکھا کہ روضۂ مبارکہ کی جالیاں کُھلی ہوئی ہیں ، میں ایک راستے سے اندرجانا چاہتاہوں مگرجا نہیں پا رہا ۔دوتین بارایسا ہوا پھرمجھے دعوتِ اسلامی کی مجلس شوریٰ کے مرحوم رکن حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری مزارِپاک کی پچھلی طرف نظرآئے اور انہوں نے مجھے اشارہ کرکے اندر بلایا ۔ میں مذکورہ طالب علم کے ساتھ اندر حاضِر ہوا ،دونوں ہاتھ ادب سے باندھ لئے،میری آنکھوں سے اشک جاری تھے کہ آج کس عظیم المرتبت آقا صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمکی بارگاہ میں حاضر ہوں۔ اسکے بعد حاجی زم زم رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ نے مجھے مزارمبارک کے بالکل قریب بٹھادیا۔ مجھے خواب ہی خواب میں یوں محسوس ہورہاتھا کہ گویا حاجی زم زم رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ مزارِ مبارک پر خادِم کی حیثیت سے موجودہیں۔

یِہی آرزو ہوجو سرخرو ملے دوجہان کی آبرو

میں کہوں : غلام ہوں آپ کا، وہ کہیں کہ ہم کو قَبول ہے

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

نیک خواب بِشَارَتیں ہیں

             سرکارِمدینۂ منوّرہ،سردارِمکّۂ مکرّمہصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم  کا فرمانِ


 

 



Total Pages: 208

Go To