Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

رہے تھے ،میں بدستور کھڑا ہو گیا توآنکھ بند ہو گئی، میری بائیں طرف نگرانِ شوریٰ حاجی عمران سَلَّمَہُ الرَّحْمٰن کھڑے تھے، اُن سے تذکِرہ کیا تو وہ بھی یہ منظر دیکھ چکے تھے، میرے دائِیں طرف دارُالافتااہلسنّت کے مُصدِّق مفتی فضیل صاحب مدظلہ العالی کھڑے تھے، اُن کی توجُّہ دلائی تو وہ بھی متوَّجِہ ہوئے ، نگرانِ شوریٰ نے مجھ سے پھر چہرے کی طرف جھکنے کا کہا، میں نے تعمیلِ ارشاد کی تو اب کی بار پہلے سے زیادہ آنکھ کُھلی اور پُتلی بھی نظر آنے لگی، اور آنسوبھی نکل آئے۔یہ منظر مفتی صاحِب سمیت کئی حاضِرین نے اپنی کُھلی آنکھوں سے دیکھا۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۱۱۱)جِنّات کی اشک باری

          چِشتیاں (پنجاب )کے اسلامی بھائی حسان رضا عطاری کا بیان کچھ اِس طرح ہے کہ میں عالَمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ میں تجوید وقِرائَ ت کورس (سالِ اوّل) کا طالبُ العلم ہوں ، ۲۱ ذوالقعدہ ۱۴۳۳ھ شبِ منگل میں محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کی عیادت وزیارت کی نیّت سے اَسپتال حاضر ہوا تو وہ بے ہوش تھے ۔زیارت کرکے میں واپَس آگیا اور فیضانِ مدینہ میں اپنے رہائشی کمرے میں آکر سو گیا ۔ اچانک کمرے میں کسی کے رونے کی آوازیں آنے


 

 



Total Pages: 208

Go To