Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

جو خود پستیوں کی طرف محوِ سفر ہو وہ کسی کو بلندی کا راستہ کیونکر دکھائے گا ۔  ۱؎

                     سُونا جنگل رات اندھیری ،چھائی بدلی کالی ہے

سونے والو جاگتے رہیو چوروں کی رَکھوالی ہے               (حدائق بخشش،ص۱۸۵)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۲) مزاج میں نرمی

         حاجی زم زم علیہ رَحمَۃُ اللہ الاکرمکے بچوں کی امی کا بیان ہے کہ مرحوم کی طبیعت میں بہت نرمی تھی ، غصّہ بَہُت ضَبْط کیا کرتے تھے ، ایک مرتبہ ان کے چھوٹے بیٹے نے موبائل پانی کے ٹب میں ڈال دیا ،اس کے باوُجُود انہوں نے کوئی غصّہ نہیں کیا ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۳) اپنے بچوں تک سے مُعافی مانگ لیتے

          حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری کے بڑے بیٹے محمد جُنَید رضا عطاری کا بیان ہے کہ جب ابُّو کسی مُعامَلے میں ہماری اِصلاح فرماتے تو بسااوقات بعد میں مُعافی مانگتے اور کہتے: آپ کا دل دُکھ گیا ہوگا۔

(۴)کسی کا دل نہ دُکھے

          حاجی زم زم علیہ رَحمَۃُ اللہ الاکرمکی والدۂ محترمہ کا بیان ہے کہ میرے بیٹے

مـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــدینہ

   ۱؎  :تربیت اولاد کی اہمیت وطریقہ کار جاننے کے لئے مکتبۃ المدینہ کی مطبوعہ کتاب ’’تربیتِ اولاد‘‘کا مطالعہ کیجئے۔

 



Total Pages: 208

Go To