Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

شیطان ہمارے ساتھ کھیلتا رہے، لہٰذا خوب ہوشیار رہئے۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۹۵)میری سُستی کو چُستی میں بدل دیا

          کوٹ عطاری(کوٹری ، باب الاسلام سندھ) کے اسلامی بھائی محمد جنید عطّاری کا بیان کچھ یوں ہے کہ ایک مرتبہ مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ آفندی ٹاؤن حیدرآباد میں رکنِ شوریٰ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری سے ملاقات ہوئی تو حسبِ عادت میری خیریت دریافت فرمائی ۔پھر ایک ایسا واقعہ ہوا جس نے میری سُستی کو چُستی میں بدل دیا ۔ہوا کچھ یوں ہوا کہ دورانِ گفتگو میں نے حاجی زم زم سے عرض کی کہ میر ے پاس دو’’مَدَنی بہاریں ‘‘ہیں ، ایک آدھ دن میں آپ کو پیش کردوں گا تومحبوبِ عطّار پُھرتی سے اُٹھے اور مجھے کاغذ دے کر کہنے لگے :پیارے بھائی!ابھی ہاتھوں ہاتھ لکھ کردے دیں ، میرا تجرِبہ ہے کہ بعد میں شیطان لکھنے نہیں دیتا،بعض اسلامی بھائی سستی کرتے ہیں اور لکھ کر نہ دینے سے ہزاروں مدنی بہاریں جمع ہونے سے رہ جاتی ہیں۔چُنانچِہ میں نے اُسی وَقْت وہ مدنی بہاریں انہیں لکھ کردے دیں۔اس سے میرا ذہن بنا کہ جونیک کام ہاتھوں ہاتھ ہوسکتا ہو اُس میں تاخیر نہیں کرنی چاہئے ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد


 

 



Total Pages: 208

Go To