Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

اور خُصُوصی اسلامی بھائیوں میں مَدَنی کام کی دھومیں مچنا شُروع ہوگئیں۔ بابُ الاسلام سطْح کے سنّتوں بھرے اجتماع میں خُصُوصی اسلامی بھائیوں کے لئے الگ سے مکتب بنانے کی ترکیب ہوئی جس میں انہیں تمام بیانات اشاروں کی زَبان میں سنائے گئے ،اَ لْحَمْدُللّٰہعَزَّوَجَلَّ! حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ البارینے اِس حوالے سے بھی بَہُت شفقتیں فرمائیں اور آخِری نِشَست میں ’’ ذکرُاللہ ‘‘اشاروں سے کروانے کی ترکیب بنائی ۔ش  تعالیٰ ان کو جزائے خیر دے ۔اٰمِین بِجاہِ النَّبِیِّ الْامین صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۹۱) استِقامت کا مَدَنی نُسخہ

          مرکزالاولیاء(لاہور) کے ایک ذمّے دار اسلامی بھائی محمد اجمل عطّاری  کا بیان ہے کہ مَدَنی انعامات کے تاجدار ،محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے مجھے بتا یا تھا کہ ایک بار میں نے باپا جان کی خدمت میں عرض کیا کہ اسلامی بھائی مدنی ماحول میں آتے ہیں پھر ٹوٹ جاتے ہیں ،کوئی ایسا طریقہ ارشاد فرمادیں کہ مَدَنی ماحول میں استِقامت مل جائے! تو آپ دامت برکاتہم العالیہ نے جو کچھ فرمایا اُس کا خلاصہ یہ ہے کہ جو یہ چاہتا ہے کہ مجھے مَدَنی ماحول میں استِقامت مل جائے تو اُسے چاہیے کہ اپنے کان ، آنکھ اورزَبان بند کرکے اپنے کام میں لگا رہے یعنی اپنے کام سے کام رکھے۔پھر اس کی وَضاحت فرمائی کہ اگر کوئی ذَیلی مشاوَرت


 

 



Total Pages: 208

Go To