Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مجھے کافی عرصہ ان کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا ،وہ جب بھی ملتے مسکراکر ملتے ۔ انہوں نے مجھے بَہُت شفقت دی ۔اللہ عَزَّوَجَلَّ کی محبوبِ عطار رکن شوریٰ حاجی زم زم رضا عطاری پر رحمت ہو اور ان کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔  ٰ امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

ان کی صحبت میں تاثیر تھی

          حیدر آباد (باب الاسلام سندھ ) کے اسلامی بھائی محمد انیس عطّاری کا بیان ہے کہ ان کی صحبت میں بڑی تاثیر تھی ،ان کی صحبت میں رہنے والا بھی عاشِقِ عطّار بن جایا کرتا تھا۔ مجھے طویل عرصہ ان کی صحبتِ بابرکت میں رہنے کا موقع ملا ، پھر میں نے باب المدینہ کراچی میں رِہائش اختیار کرلی، تادمِ تحریر تقریباً12سال ہوگئے لیکن میری ذات پر ان کی نیک صحبت کے اثرات آج بھی باقی ہیں۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸۹)رِکشا ڈرائیور پرانفرادی کوشش

          اَ لْحَمْدُ للّٰہعَزَّوَجَلَّ! حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباریسفر وحضر میں انفرادی کوشش کیا کرتے تھے چنانچہ مجلس مکتوبات وتعویذاتِ عطاریہ کے ایک


 

 



Total Pages: 208

Go To